قومی بچت اسکیموں میں سرمایہ کاری کرنے والے ہوشیار

اسلام آباد: قومی بچت اسکیموں میں سرمایہ کاری کرنے والے بھی ریڈار پر آگئے ہیں۔ سیونگ اسکیمز میں سرمایہ کاری کرنے والوں کی شناخت کے لیے قانون تیار کر لیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق قومی بچت اسکیموں میں سرمایہ کاری کرنے والے افراد کو بھی دائرہ قانون میں لانے کی تیاری مکمل کر لی گئی ہے۔ خبرنامے کے پاس دستیاب دستاویزات کے مطابق حکومت کی جانب سے تیار کردہ مجوزہ قانون سے سیونگ اسکیم میں منی لانڈرنگ اور دہشت گردی کی فنانسگ کے خلاف کارروائی کرنے میں مدد ملے گی۔ قومی بچت مرکز اپنے 40 لاکھ صارفین کی جانچ کے لیے نادرا سے مدد لے گا۔

مزید برآں مشکوک افراد کی نشاندہی کے لیے یو این ایس سی کی فہرست کو بھی چیک کرنے کی ہدایت کی گئی ہے جبکہ فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کی جانب سے دی گئی شرائط کے مطابق سرمایہ کاروں کی جانچ کی جائے گی کہ سرمایہ کار کا پیسہ کہاں سے آیا۔

اس حوالے سے فنانشل مانیٹرنگ یونٹ کو اطلاع کرنا ضروری ہوگا کہ ادائیگی کیسے کی گئی۔ قومی بچت میں سرمایہ کاروں کو اپنی پوری معلومات دینا ہوں گی۔ دستاویز میں قومی شناختی کارڈ جمع کرانا بھی لازمی ہوگا۔ علاوہ ازیں بیرون ملک رہنے والے سرمایہ کاروں کو بھی پاسپورٹ اور قومی شناختی کارڈ اوورسیز  دینا ہوگا۔ سرمایہ کاروں کو موجودہ رہائشی پتہ ، رابطہ نمبر اور ای میل ایڈریس بھی دینا ہوگا۔ مجوزہ قانون کے مطابق کاروبار  ہونے کی صورت میں کمپنی کی رجسٹریشن ، این ٹی این نمبر دینا ہوگا۔ جبکہ زرائع آمدن ، سرمایہ کاری کے کل اثاثے  کی بھی معلومات دینا ضروری ہوں گی۔

متعلقہ خبریں

Leave a Comment