رانا ثنااللہ کے جوڈیشل ریمانڈ میں 4 جنوری تک توسیع

لاہور: لاہور کی انسداد منشیات عدالت نے منشیات اسمگلنگ کیس میں گرفتارسابق صوبائی وزیر قانون اور  رکن قومی اسمبلی راناثنا اللہ کے جوڈیشل ریمانڈ میں 4 جنوری تک توسیع کردی ہے۔

تفصیلات کے مطابق انسداد منشیات عدالت میں مقدمے کی سماعت ہوئی جہاں جیل حکام نے رانا ثنااللہ کو پیش کیا۔ رانا ثنا اللہ کے وکیل نے استدعا کی کہ عدالت چالان کی واضح کاپیاں فراہم کرے۔  رانا ثنااللہ کی اہلیہ، داماد شہر یار اور بیٹی اقرار کی جانب سے ان کے منجمد بینک اکاونٹس کوکھولنے کے لیے عدالت میں درخواست بھی دائر کردی گئی ہے۔

رانا ثنااللہ کو کیوں گرفتار کیا گیا؟

سابق صوبائی وزیر قانون اور رکن قومی اسمبلی رانا ثنا اللہ کو انسداد منشیات فورس (اے این ایف) نے 01 جولائی 2019  کو 15 کلو منشیات کی مبینہ برآمدگی  کے الزام میں سکھیکی کے نزدیک اسلام آباد-لاہور موٹروےسے  حراست میں لیا۔ اے این ایف کے مطابق  اُنہیں  گاڑی سے منشیات برآمد ہونے کی وجہ سے گرفتار کیا گیا۔

گرفتاری کے بعد رانا ثنا اللہ کو انسدادِ منشیات کی عدالت میں پیش کیا گیا تھا جہاں انہیں 14 روز کے جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیج دیا گیا۔ رانا ثنااللہ کی جانب سے ضمانت پر رہائی کے لیے انسداد منشیات عدالت میں درخواست بھی دائر کی گئی تھی، لیکن یہ درخواست مسترد کر دی گئی تھی۔ درخواست کے مسترد ہونے کے بعد رانا ثنا اللہ نے لاہور ہائی کورٹ سے رجوع کرلیا تھا۔

متعلقہ خبریں

Leave a Comment