صومالیہ کی تاریخ کا بدترین حملہ، 61 افراد ہلاک

فوٹو: بنکاک پوسٹ

صومالیہ، موغادیشو: صومالیہ کے دارالحکومت میں ایک افسوس ناک ٹرک بم دھماکے میں کم از کم 61 افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔  حکومتی ترجمان اسماعیل مختار کے مطابق ایک بڑی تعداد میں افراد زخمی ہونے کی وجہ سے ہلاکتوں میں اضافے کا خدشہ ہے۔ صومالیہ میں کام کرنے والی ایک تنظیم کے مطابق یہ دھماکہ صومالیہ میں ہونے والے بدترین حملوں میں سے ایک ہے۔

تفصیلات کے مطابق صومالیہ کے دارالحکومت موغادیشو میں ہفتے کی صبح ایک سیکیورٹی چوکی پر ایک ٹرک بم حملے میں کم از کم 61 افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔ سرکاری ترجمان اسماعیل مختار نے بتایا کہ ممکنہ طور پر مرنے والوں کی تعداد میں اضافے کا خدشہ ہے۔ امین ایمبولینس سروس کے ڈائریکٹر عبد الرحمن نے 61 افراد کی ہلاکت کی تصدیق کی ہے اور کہا کہ 50 سے زیادہ افراد زخمی بھی ہوئے ہیں۔

میئر عمر محمد محمد نے جائے وقوعہ پر گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ہلاک ہونے والوں میں یونیورسٹی کے طلباء بھی شامل ہیں۔ پولیس نے بتایا کہ ہلاک ہونے والوں میں دو ترک شہری بھی شامل ہیں۔ دھماکے کی ذمہ داری ابھی تک کسی تنظیم نے قبول نہیں کی ہے۔

واضح رہے کہ لقاعدہ سے وابستہ تنظیم الشباب صومالیہ اور دیگر علاقوں میں اکثر ایسے حملے کرتی رہتی ہے۔ الشباب پر اکتوبر 2017 میں موگادیشو ہی میں ایک تباہ کن ٹرک بم دھماکے کا الزام لگایا گیا تھا جس میں 500 سے زیادہ افراد ہلاک ہوئے تھے۔ اس گروپ نے کبھی بھی اس دھماکے کی ذمہ داری قبول نہیں کی اس دھماکے کی وجہ سے عوام میں بڑے پیمانے پر غم و غصہ پایا گیا تھا۔

متعلقہ خبریں

Leave a Comment