چیف الیکشن کمشنر اور ممبران کی تقرری۔۔ مسئلہ مستقل بنیادوں پر حل کرنے کا فیصلہ


اسلام آباد: وفاقی حکومت نے چیف الیکشن کمشنر اور ممبران کی تقرری کا تنازعہ مستقل بنیادوں پر حل کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے۔ اس مقصد کے لیے حکومت نے پارلیمانی کمیٹی برائے چیف الیکشن کمشنر اور ممبران تعیناتی کے رولز تبدیل کرنے کا منصوبہ بنا لیا ہے۔

ذرائع پارلیمانی امور کے مطابق وفاقی حکومت نے پارلیمانی کمیٹی برائے چیف الیکشن کمشنر اور ممبران تعیناتی کے رولز تبدیل کرنے کا منصوبہ بنا لیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق پارلیمانی کمیٹی میں چیف یا ممبران کی تعیناتی کے لئے رولز میں دو تہائی کی جگہ سادہ اکثریت کا لفظ ڈالا جائے گا۔

تفصیلات کے مطابق موجودہ رولز میں دوتہائی کی شرط کی وجہ سے چیف الیکشن کمشنر اور ممبران کی تعیناتی تاحال نہیں ہوسکی۔ حکومت کا موقف ہے کہ پارلیمانی کمیٹی کے موجودہ رولز غیر آئینی ہیں۔ ججز تعیناتی سمیت دیگر کمیٹیوں میں دو تہائی کی شرط نہیں ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ پارلیمانی کمیٹی کے رولز موجودہ تنازعہ کو حل کرنے کے بعد تبدیل کئے جائیں گے۔

واضح رہے کہ الیکشن کمیشن کے سندھ اور بلوچستان سے دو ممبرز کی تقرری 11 ماہ سے نہیں کی جا سکی۔ دونوں ممبران 26 جنوری کو ریٹائر ہوگئے تھے۔ دسمبر کے پہلے ہفتے میں چیف الیکشن کمیشن بھی اپنے عہدے سے سبکدوش ہو گئے تھے۔


Leave A Reply

Your email address will not be published.