بھارتی پولیس افسر کی بھارتی باشندوں کو پاکستان جانے کی ہدایت

اتر پردیش:  بھارت میں متنازع شہریت قانون کی منظوری کے بعد سے خونی فسادات کا سلسلہ بھارت بھر میں پھیل چکا ہے۔ اس قانون سے جہاں مسلمانوں کے حق میں مظاہرے ہو رہے ہیں وہیں بنیاد پرست ہندو مسلمانوں کے خلاف کھل کر سامنے آ گئے ہیں۔

ایک تازہ ترین واقعے میں ایک سینئر پولیس آفیسر ایک ویڈیو میں مسلمانوں کے خلاف تعصب پھیلاتے دیکھا جا سکتا ہے جس میں وہ ملک  میں شہریت کے نئے قانون پر احتجاج کرنے والے بھارتی باشندوں کو "پاکستان” جانے کے لئے کہتا ہے۔ ویڈیو میں دیکھے جانے والے پولیس آفیسر اکھلیش نرائن سنگھ کو محلہ لساری گیٹ میں لوگوں کو گالیاں دیتے سنا جا سکتا ہے۔ وہ کہتے ہیں کہ "یہ جو کالی اور پیلی پٹی باندھے ہوئے ہیں ان سے کہہ دو کہ پاکستان چلے جاو۔ کھاو گے یہاں کا، گاو گے کہیں اور کا۔ یہ گلی مجھے یاد ہو گئی ہے۔ اور جب مجھے یاد ہو جاتا ہے تو میں نانی تک پہنچ جاتا ہوں۔”

میرٹھ کے ایس پی اکھلیش نرائن سنگھ نے اس ویڈیو کی تردید نہیں کی، بلکہ اپنی بات کے جواز میں کہا ہے کہ کچھ نوجوان پاکستان زندہ باد کے نعرے لگا رہے تھے۔ انھوں نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے یہ بھی کہا کہ "کچھ نوجوان پاکستان زندہ باد کے نعرے لگا رہے تھے، اس لیے ہم نے ان سے کہا کہ پاکستان چلے جاو۔” لیکن اس چالیس سکنڈ کی ویڈیو میں وہ کسی نعرے کی نشاندہی نہیں کرتے۔ ٹویٹر پر شیئر کی جانے والی ویڈیو کو 20 دسمبر کو یوپی کے میرٹھ شہر کے علاقے لیزاری گیٹ ممیں فلمایا گیا تھا۔ اس علاقے میں مظاہرین اور پولیس کے مابین جھڑپوں میں پانچ مسلمان افراد ہلاک ہوگئے تھے۔

وزیر اعظم نریندر مودی کی ہندو قوم پرست حکومت کی جانب سے شہریت ترمیمی قانون نافذ کرنے کے بعد بھارت کو وسیع پیمانے پر عوامی احتجاج کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ یہ قانون جو تین پڑوسی ممالک کے مسلم شہریوں کے علاوہ تمام مذاہب و شہریت کی پیش کش کرتا ہے۔

ہنگامہ آرائی کرتے پولیس افسر اور دیگر اہلکاروں کے ساتھ ، تنگ لین میں کھڑے تینوں افراد کو دھمکیاں دیتے ہوئے بھی دیکھا جاسکتا ہے۔ "اگر کچھ ہوتا ہے تو، آپ لوگ اس کی قیمت ادا کریں گے۔ ہر گھر سے ہر شخص کو گرفتار کرلیا جائے گا۔”

یو پی، ہندوستان کی سب سے زیادہ آبادی والی ریاست ہے جس میں تقریبا 200 ملین آبادی ہے۔ یو پی کے وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ نے مظاہروں پر پولیس کی کارروائی کو جواز پیش کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس کارروائی نے مظاہرین کو خاموش کردیا۔

واضح رہے بھارت میں حالیہ مظاہروں میں تقریباً 19 افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں