نیب ترمیمی آرڈیننس؛ زرداری، نواز شریف کے مستفید ہو نے کا امکان

National Accountability Bureau

اسلام آباد: صدر مملکت کی منظور کے بعدوفاقی حکومت کی جانب سے نیب آرڈیننس 2019 جاری کردیا گیا ہے جس کے باعث نہ صرف بہت سے مقدمات متاثر ہوں گے بلکہ  نیب کے دائرہ اختیار سے نکل جائیں گے۔ اس آرڈیننس کے ذریعے نہ صرف کاروباری افرادبلکہ سیاسی قیادت کو بھی فائدہ پہنچے گا۔

ذرائع کے مطابق نیب ترمیمی آرڈیننس کے ذریعےایک بڑی تعداد میں موجودہ اور سابقہ عوامی عہدے داروں کے مستفید ہونے کا امکان ہے۔ سیاست دانوں کی فہرست میں   سابق صدر آصف زرداری، سابق وزرائے اعظم نواز شریف،شاہد خاقان عباسی، یوسف رضاگیلانی اور راجہ پرویز اشرف مستفید ہو سکیں گے۔ اپوزیشن لیڈر شہباز شریف، سابق وفاقی وزرا احسن اقبال ، مفتاح اسماعیل، سعدرفیق ، تحریک انصاف کے رکن پنجاب اسمبلی علیم خان اور سابق وزیر اعظم کے پرنسپل سیکرٹری فواد حسن فوادبھی نیب ترمیمی آرڈیننس سے فائدہ اٹھا سکیں گے۔ ذرائع کے مطابق نیب ترمیمی آرڈیننس کی منظوری کے بعد نہ صرف نواز شریف کی ایون فیلڈ ریفرنس کی سزا عدالت کے ذریعے ختم ہو سکے گی بلکہ سابق صدر آصف علی زرداری کا جعلی بینک اکاؤنٹس کیس بھی غیر موثر ہو جائے گا۔

  ذرائع کے مطابق نیب ترمیمی آرڈیننس سے متعدد حکومتی شخصیات بھی مستفید ہو سکیں گی۔  حکومتی شخصیات کی فہرست میں وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا محمود خان، سینیر وزیر عاطف خان، پرویز خٹک اور وزیر اعظم کے سیکرٹری اعظم خان بھی نیب آرڈیننس سے فائدہ اٹھا سکیں گے۔ ذرائع کے مطابق محمود خان، عاطف خان، اعظم خان اور پرویز خٹک کے خلاف نیب میں  مالم جبہ اور بی آر ٹی کیس میں تحقیقات اور انکوائریاں چل رہی ہیں۔

مزید پڑھیں: صدر مملکت نے نیب آرڈیننس کی منظوری دے دی

 نیب ترمیمی آرڈیننس کے تحت نیب کے اکثر مقدمات دیگر عدالتوں کو منتقل ہو جائیں گے۔ نئے آرڈیننس میں بد نیتی یا طریقہ کار کے باعث بے ضابطگی کرپشن تصورنہیں ہوتی۔آرڈیننس کے مطابق تمام سیاسی رہنماوں کے خلاف نیب مقدمات بد نیتی کی بنیاد پر بنائے گئے تھے۔ جن مقدمات میں کرپشن کا عنصر ثبوت کے ساتھ موجود ہو گا وہ بدستور قائم رہیں گے۔ نیب ذرائع کا کہنا ہے کہ نیب ترمیمی آرڈیننس کا اطلاق عدالتوں میں زیرسماعت اور نیب میں زیرتفتیش مقدمات پربھی ہوگا۔ نیب مقدمات میں ٹرائل کورٹ سے سزا پانے والے اعلیٰ عدالتوں میں ریلیف کیلئے اپیل کر سکیں گے۔

یاد رہے آج صدرِ مملکت نے نیب ترمیمی آرڈیننس 2019 کی منظوری دی تھی جس کے بعد وزارت قانون نے اس کا باقاعدہ نوٹیفیکیشن جاری کر دیا تھا۔

 

آئی ڈی: 2019/12/29/1535

متعلقہ خبریں

Leave a Comment