اتفاق رائے قائم نہیں ہو سکتا تو معاملات کیسے چلیں گے: فواد چوہدری


اسلام آباد: وفاقی وزیر سائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چوہدری کا کہنا ہے ایسا لگ رہا ہے حکومت اور اپوزیشن میں معاملات آگے نہیں بڑھ رہے۔  اتفاق رائے کبھی بھی 100 فیصد پیدا ہی نہیں کیا جا سکتا۔ جمہوریت میں کم سے کم اتفاق رائے کی ضرورت ہوتی ہے۔ عدلیہ اور فوج کے معاملات پر سب کو ایک پیج پرہوناچاہیے۔

آج سینیٹ کے اجلاس میں اظہار خیال کرتے ہوئے وفاقی وزیر سائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چوہدری نے کہا کہ حکومت نئے سال کا آغاز مختلف طریقے سے کرنا چاہتی ہے۔ غلطیاں ہر حکومت اور ہر ادارے سے ہوتی ہیں۔ حکومت اور اپوزیشن میں اہم معاملات پر اتفاق رائے ہونی چاہیے۔ اگر معاملات پر اتفاق رائے قائم نہیں ہو گا تو معاملات کیسے چلیں گے۔ ایسا لگ رہا ہے حکومت اور اپوزیشن میں معاملات آگے نہیں بڑھ رہے۔

انہوں نے کہا کہ 2 ادارے پارلیمان کے اور 2 پارلیمان کے باہر ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ پارلیمان کے ادارے حکومت اور اپوزیشن ہیں جبکہ پارلیمان سے باہر کے ادارے فوج اور عدلیہ ہیں۔ لگ رہا ہے کہ چاروں ادارے دست وگریباں ہیں۔ حکومت اور اپوزیشن کو چاہیے کہ جن معاملات میں اتفاق رائے پیدا ہو سکتا ہے، وہاں اتفاق رائے پیدا کریں۔

فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ عدلیہ اور فوج کے معاملات پر سب کو ایک پیج پر ہونا چاہیے۔ الیکشن کمیشن، احتساب اور آرمی ترمیمی بل پر اتفاق رائے ہونا چاہیے۔ اتفاق رائے کبھی بھی 100 فیصد پیدا ہی نہیں کیا جا سکتا۔  جمہوریت میں کم سے کم اتفاق رائے کی ضرورت ہوتی ہے۔

آئی ڈی: 2020/01/01/2007 

Leave A Reply

Your email address will not be published.