کیا پاکستان میں نئے ڈیمز بن پائیں گے؟

سابق چیف جسٹس ثاقب نثار نے پانی کی قلت کے پیش نظر نئے ڈیمز بنانے کا اعلان کیا تھا۔ دیامیر بھاشا اور مہمند ڈیم کی تعمیر کیلئے ڈیم فنڈ بھی قائم کیا گیا۔

ڈیم فنڈ جمع کرنے کا سلسلہ جولائی 2018ء میں شروع کیا گیا تھا۔ اس وقت کے چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے سب سے پہلے ڈیم فنڈ میں دس لاکھ روپے کا عطیہ دیا۔ ڈیم فنڈ میں عطیات جمع کرانے کیلئے مختلف تقریبات کا انعقاد بھی کروایا گیا۔ ایک تقریب میں وزیر اعظم عمران خان کو بھی مدعو کیا گیا، جس کے بعد چندہ جمع کرنے کی اس مہم میں حکومت بھی شامل ہو گئی۔ پاک فوج، حکومتی اداروں اور کاروباری شخصیات سمیت بیرون ملک مقیم پاکستانیوں نے ڈیم کے لئے دل کھول کر عطیات دئیے۔ سرکاری ملازمین کی تنخواہوں اور ریلوے کے ٹکٹس سے بھی رقم جمع کی گئ۔ چندہ جمع کرنے کی مہم کے لئے سابق چیف جسٹس نے بیرون ملک کے دورے بھی کئے جبکہ مقامی میڈیا پر ڈیم فنڈ کی تشہیر کے لئے اشتہارات بھی دئیے گئے۔

حکومت کی شمولیت کے بعد ڈیم فنڈ کا نام سپریم کورٹ وزیر اعظم ڈیم فنڈ رکھ دیا گیا۔ ڈیم فنڈ کی مہم شروع کرنے پر سابق چیف جسٹس ثاقب نثار کو تنقید کا نشانہ بھی بنایا گی۔ ثاقب نثار نے ہر حال میں ڈیمز بنانے کا اعلان تو کیا تاہم اس کے بعد ڈیم فنڈ کو صرف آگاہی مہم قرار دیا اور کہا کہ ڈیمز بنانا حکومت کا کام ہے نہ کہ سپریم کورٹ کا۔ دیامیر بھاشا اور مہمند ڈیم کی تعمیر کیلئے  سپریم کورٹ نے عملدرآمد بینچ قائم کیا اور چیئرمین واپڈا کی سربراہی میں کمیٹی بھی قائم کی گئی۔

آئی ڈی: 2020/01/05/2339

اپنا تبصرہ بھیجیں