سروسز ایکٹ ترمیمی بل 2020 قومی اسمبلی سے منظور

National Assembly

اسلام آباد: قائمہ کمیٹی کی جانب سے آرمی ترمیمی ایکٹ 2020 کو متفقہ طور پر منظور کرنے کے بعد آج قومی اسمبلی میں آرمی ترمیمی ایکٹ منظور کر لیا گیا ہے۔ بل پیش کرنے سے قبل وزیر دفاع پرویز خٹک نے پاکستان پیپلز پارٹی سے درخواست کی کہ وہ اپنی پیش کردہ ترامیم کو واپس لے لے۔  اس درخواست کے جواب میں پیپلز پارٹی کی طرف سے نوید قمر نے اپنی ترامیم واپس لینے کا اعلان کیا۔

تفصیلات کے مطابق آج قومی اسمبلی کا اجلاس اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر کی زیر صدارت ہوا۔ آج قومی اسمبلی کے اجلاس میں وزیر اعظم عمران خان نے بھی شرکت کی۔ وزیر دفاع پرویز خٹک نے بل پیش کرنے سے قبل پاکستان پیپلز پارٹی سے درخواست کی کہ وہ اپنی ترامیم واپس لے لے۔ اس کے جواب میں پیپلز پارٹی کے نوید قمر نے ایوان کو آگاہ کیا کہ اپوزیشن سے مشاورت کے بعد اور خطے کی صورتحال کو مد نظر رکھتے ہوئے پیپلز پارٹی اس عمل میں الگ نہیں رہنا چاہتی چنانچہ پیپلز پارٹی اپنی ترامیم سے دستبردار ہوتی ہے۔ اس پر وزیر دفاع نے آرمی ایکٹ 1952 میں بل پیش کیے جنہیں اتفاق رائے سے منظور کر لیا گیا۔ پاکستان مسلم لیگ ن نے بھی بل کی حمایت میں ووٹ دیا۔

 یاد رہے کہ پاکستان پیپلز پارٹی نےبل میں تین ترامیم تجویز کی تھیں۔ ان میں پہلی ترمیم یہ تھی کہ وزیر اعظم کو پارلیمان کی قومی سلامتی کمیٹی کو سوسز چیف کی مدت ملازمت میں توسیع کی وجوہات ریکارڈ کروانا ہوں گی۔ دوسری ترمیم یہ تھی کہ وزیر اعظم کی جانب سے پارلیمان کو وجوہات بتانے کے بعد مدت ملازمت میں توسیع تو دی جاسکتی ہے لیکن دوبارہ تعیناتی نہیں کی جا سکتی، جبکہ تیسری ترمیم یہ تھی کہ آرمی ایکٹ میں ترمیم کے حکومتی بل میں سے توسیع کے معاملے کو عدالت میں چیلنج نہ کرنے کی شق بھی ختم کی جائے۔ یہ تجاویز پاکستان پیپلز پارٹی نے قائمہ کمیٹی برائے دفاع میں پیش کی تھیں۔  جبکہ دوسری جانب یہی ترامیم قومی اسمبلی سیکرٹریٹ میں بھی جمع کروائی گئی تھیں۔ 

دوسری جانب جمعیت علمائے اسلام اور جماعت اسلامی کی جانب سے بل کی مخالفت کی گئی اور جمعیت علمائے اسلام، جماعت اسلامی اور سابق فاٹا کے ممبران نے قومی اسمبلی سے احتجاجاً واک آوٹ کیا۔ امکان ظاہر کیا جا رہا ہے کہ آج آرمی ایکٹ سینیٹ سے بھی منظور کروا لیا جائے گا۔

بلز کی منظوری کے بعد قومی اسمبلی کا اجلاس ملتوی کر دیا گیا۔

 

آئی ڈی: 2020/01/07/2488 

متعلقہ خبریں

Leave a Comment