سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے دفاع میں آرمی ترمیمی ایکٹ اتفاق رائے سے منظور


اسلام آباد: سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے دفاع نے تینوں مسلح افواج کے ایکٹ میں ترامیم کے بل متفقہ طور منظور کرلئے ہیں۔  وزیر دفاع پرویز خٹک کے مطابق یہ بل منظوری کیلئے کل سینٹ کے اجلاس میں پیش کئے جائیں گے،،جس کے بعد مسلح افواج سے متعلق پارلیمنٹ میں قانون سازی کا عمل مکمل ہوجائے گا۔

تفصیلات کے مطابق تینوں مسلح افواج سے متعلقہ ایکٹ میں ترامیم سے متعلق ترمیمی بل کا جائزہ لینے کیلئے سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے دفاع کا ہنگامی اجلاس پارلیمنٹ ہاوس اسلام اباد میں منعقد ہوا۔ کمیٹی کے چیئرمین سینیٹر ولید اقبال نے سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے دفاع کے ان کیمرہ اجلاس کی صدارت کی ، جبکہ وزیر دفاع پرویز خٹک، وزیرقانون بیرسٹر فروغ نسیم، سیکرٹری دفاع سمیت سینیٹر شیری رحمان، دلاور خان، مشاہد حسین سید اور سجاد حسین طوری اجلاس میں شریک ہوئے ۔ نیشنل پارٹی کے میر کبیر، جماعت اسلامی کے سنیٹر مشتاق احمد اور جے یو آئی (ف) کے سینیٹر طلحہ محمود اجلاس میں شریک نہیں ہوئے۔ 

اجلاس میں تینوں مسلح افواج کے ترمیمی قوانین کا جائزہ لینے کے بعد متفقہ طور پر یہ بل منظور کرلئے گئے۔  اجلاس کے بعد وزیر دفاع پرویز خٹک نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ سینٹ کی قائمہ کمیٹی برائے دفاع نے بل متفقہ طور پر منظور کرلیا ہے۔کسی جماعت کی طرف سے کوئی ترامیم پیش نہیں کی گئیں اور اب سینٹ سے بل کی منظوری کل لی جائے گی۔ 

وزیر قانون فروغ نسیم نے میڈیا ٹاک میں کہا کہ جو بلز قومی اسمبلی میں پاس ہوئے تھے ، وہ منظور ہوگئے ہیں۔  کل یہ بلز سیینٹ میں پیش کریں گے۔  پیپلز پارٹی کے سینیٹر رحمان ملک کا اس موقع پر کہنا تھا کہ پیپلز پارٹی نے اپنی ترامیم واپس لے لی ہیں، البتہ کچھ معاملات اٹھائے ہیں اور کلیریکل غلطیوں کی طرف توجہ دلائی ہے ۔ ہمیں بتایا گیا کہ توسیع کا معاملہ نیشنل ڈیفنس کونسل میں جائے گا جبکہ نیشنل ڈیفنس کونسل پہلے سے نوٹیفائیڈ ہے۔

آئی ڈی: 2020/01/07/2580 

Leave A Reply

Your email address will not be published.