آسٹریلیا کا انوکھی منطق پر دس ہزار اونٹ قتل کرنے کا فیصلہ


سڈنی: آسٹریلیا میں لگی آگ بڑے پیمانے پر مالی و جانی نقصان کا باعث بن چکی ہے۔ اس آگ کی وجہ سے اب تک اندازاً 48 کروڑ جانور اور 20 سے زائد افراد ہلاک ہو چکے ہیں، جبکہ دوسری طرف اس آگ سے ہزاروں انسان اور جانور بے گھر بھی ہو چکے ہیں۔

بین الاقوامی میڈیا میں آنے والی خبروں کے مطابق آسٹریلوی حکام نے اونٹوں کو ایک انوکھی منطق کی وجہ سے قتل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ رپورٹس کے مطابق آسٹریلوی حکام کی جانب سے کہا گیا ہے کہ اونٹ بہت زیادہ پانی پینے لگے ہیں، جس کی وجہ سے ماحول کو شدید نقصان پہنچ رہا ہے۔ اس کو مدنظر رکھتے ہوئے 10 ہزار اونٹوں کو قتل کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

رپورٹس کے مطابق اس 5 روزہ مہم کا آغاز 9 جنوری سے کیا جائے گا۔ اس بارے میں بتایا گیا ہے کہ آسٹریلوی حکام اس منصوبے پر عملدرآمد کے لیے ہیلی کاپٹر استعمال کریں گے۔

اے ایف پی نے اپنی ایک رپورٹ میں بتایا ہے کہ اونٹوں کو قتل کرنے کی ایک وجہ خشک سالی بھی ہے۔ آسٹریلیا کی مقامی حکومت کی ایک خاتون عہدیدار کے مطابق اونٹ معاشرے میں مسائل پیدا کر رہے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ اونٹوں کی بڑی تعداد گھروں کے اطراف آرہی ہے اور گھروں کے باہر لگی باڑوں کو دھکیل کر ائیرکنڈیشنر کا پانی بھی پینے کی کوشش کرتی ہے۔

واضح رہےکہ آسٹریلیا کے جنگلات میں نومبر سے لگی آگ پر قابو نہیں پایا جاسکا ہے جس میں اب تک 480 ملین جانوروں سمیت 20 سے زائد افراد بھی ہلاک اور ہزاروں بے گھر ہوچکے ہیں۔

 

آئی ڈی: 2020/01/08/2694 

Leave A Reply

Your email address will not be published.