فردوس عاشق اعوان سے اختلافات: سیکرٹری اطلاعات کو عہدے سے ہٹا دیا گیا

اسلام آباد: وزیر اعظم کی معاون خصوصی برائے اطلاعات و نشریات فردوس عاشق اعوان سے اختلافات کی وجہ سے وفاقی حکومت نے سیکرٹری اطلاعات زاہدہ پروین کو عہدے سے ہٹا دیا گیا ہے۔ بدھ کے روز اسٹیبلشمنٹ ڈویژن کے جاری کردہ ایک نوٹیفکیشن کے مطابق پاکستان ایڈمنسٹریٹو سروس (پی اے ایس) کے 22 ویں سکیل کے افسر اکبر حسین درانی کو فوری طور پر سیکرٹری بین الصوبائی رابطہ ڈویژن کے عہدے سے تبدیل کر کے سیکرٹری اطلاعات و نشریات کے طور پر تعینات کیا گیا ہے ۔ دوسری جانب نوٹیفکیشن میں سیکرٹری زاہدہ پروین کو مزیداحکامات آنے تک اسٹیبلشمنٹ ڈویژن رپورٹ کرنے کو کہاگیا ہے ۔

ذرائع کے مطابق فردوس عاشق اعوان زاہدہ پروین سے خوش نہیں تھیں کیونکہ سیکرٹری اطلاعات نے فردوس عاشق اعوان کے حلقے (سیالکوٹ) سے تعلق رکھنے والے 30 کے قریب افراد کو وزارت میں نچلے سکیل کی آسامیوں پر بھرتی نہیں کیا تھا۔ اس کی وجہ یہ تھی کہ وہ اسٹیبلشمنٹ ڈویژن کے قواعد کو ملحوظ خاطر رکھنا چاہتی تھیں، جن کے مطابق وفاقی حکومت لوئر گریڈ کی آسامیوں پر اسلام آباد کےشہریوں کو ترجیح دیتی ہے۔

یہاں یہ امر قابل ذکر ہے کہ حکومت نے گذشتہ سال زاہدہ پروین کو قائم مقام سکرٹری اطلاعات کے عہدے پر فائز کیا گیا تھا لیکن بعد میں انھیں گریڈ 22 میں ترقی دے کر مکمل چارج دیا گیا تھا۔

ذرائع نے مزید بتایا کہ وزیر اعظم کی معاون خصوصی اپنے ذاتی اخراجات بھی سرکاری خزانے سے پورے کرنا چاہتی تھیں۔ جب زاہدہ پروین نے ان کی اس خواہش کو پورا کرنے سے انکار کیا تو فردوس عاشق اعوان نے وزارت اطلاعات میں اپنے ایک قریبی افسر کو جے ایس ایڈمن کے عہدے پر تعینات کر دیا۔

مزید برآں، فردوس عاشق اعوان حال ہی میں ریٹائرہونے والے پی آئی او طاہر خوشنود سےبھی خوش نہیں تھیں کیونکہ وہ معاون خصوصی کی ہدایات پر عمل نہیں کر رہے تھے۔ وزارت اطلاعات نے طاہر خوشنود کی ریٹائرمنٹ کے بعد حکومت کو نئے پی آئی او کے لئے ظہور برلاس کو تعینات کرنے کی سمری بھی ارسال کی تھی، لیکن بعد میں ان کا نام بھی اس فہرست سے خارج کردیا گیا اور حکومت نے طاہر خوشنود کی ریٹائرمنٹ کے بعد طاہر حسن کو نیا پی آئی او مقررکیا تھا۔

 اس کے علاوہ فردوس عاشق اعوان پیمرا میں بھی کچھ لوگوں کو نچلے سے اعلیٰ عہدوں پر تعینات کرنا چاہتی ہیں، مگر چیئرمین پیمرا ان تعیناتیوں کی مخالفت کر رہے ہیں اور اگر انہوں نے یہ مخالفت جاری رکھی تو ان کو بھی عہدے سے ہٹائے جانے کے امکانات ہیں۔ تاہم قومی احتساب بیورو (نیب) بھی اشتہاروں کے ایک معاملے میں چیئرمین پیمرا محمد سلیم کے خلاف تحقیقات کر رہا ہے۔

ذرائع نے بتایاہے کہ وزیر اعظم کی معاون خصوصی فردوس عاشق اعوان نے کئی افراد کو وزارت میں مختلف عہدوں پر تعینات کروایا ہے اور یہ افراد ان کی ہدایات کے مطابق مختلف فرائض سرانجام دے رہے ہیں۔

مذکورہ معاملات سے متعلق معاون خصوصی فردوس عاشق اعوان کا موقف جاننے کے لئے پیغام بھیجا گیا تاہم انہوں نے اس کا تاحال کوئی جواب نہیں دیا۔

 

آئی ڈی: 2020/01/08/2761 

متعلقہ خبریں

Leave a Comment