راولپنڈی صدر میں پولیس پر فائرنگ کا مقدمہ درج کر لیا گیا

راولپنڈی: راولپنڈی میں  پولیس ناکے پر دہشتگردی کی واردات کا مقدمہ ہلاک دہشتگرد اور اسکے نامعلوم ساتھیوں پر درج کر لیا گیا۔ شہید ہونے والے دونوں کانسٹیبلز کو سپرد خاک کر دیا گیا ہے۔ سی پی او راولپنڈی کا کہنا ہے کہ جو بھی ہم پر حملہ کرے گا واپس نہیں جائے گا۔

تفصیلات کے مطابق گزشتہ رات راولپنڈی کینٹ کے علاقے میں پولیس ناکے پر فائرنگ سے دو کانسٹیبلز کو شہید اور ایک ڈولفن اہلکار سمیت تین راہ گیروں کو زخمی کرنے والے دہشت گرد کے خلاف تھانہ کینٹ میں مقدمہ درج کر لیا گیا۔ مقدمہ کانسٹیبل محسن محمود کی مدعیت میں درج کیا گیا ہے۔ مقدمہ میں ہلاک دہشت گرد آفتاب کے ساتھ اسکے نامعلوم ساتھیوں کو بھی شامل کیا گیا ہے۔

ایف آئی آر کے متن کے مطابق ہلاک دہشت گرد آفتاب صدر واران اڈے کی جانب سے آیا اور اس نے پولیس پارٹی پر اندھا دھند فائرنگ کردی۔ فائرنگ سے ہیڈ کانسٹیبل محمد علی اور کانسٹیبل سعید اختر موقع پر ہی جاں بحق ہو گئے، جبکہ ایک ڈولفن اہلکار سمیت ایک خاتون راہ گیر زخمی ہوئیں۔ ملزمان کے خلاف دہشتگردی کی دفعات سمیت قتل اور دیگر دفعات کے تحت مقدمہ درج کیا گیا۔

دوسری جانب شہید اہلکاروں کی نماز جنازہ پولیس لائن راولپنڈی میں ادا کر دی گئی ہے۔ نماز جنازہ کے بعد سی پی او راولپنڈی احسن یونس نے میڈیا ٹاک کے دوران اس عزم کا اعادہ کیا کہ پولیس نے مشکل صورتحال میں تربیت یافتہ دہشت گرد کا مقابلہ کیا اسے اختتام تک پہنچایا جائے گا۔

 

آئی ڈی: 2020/01/07/2803 

متعلقہ خبریں

Leave a Comment