’الیکشن کمیشن گوشواروں کے تضاد پر کرپٹ پریکٹس کے تحت کاروائی نہیں کرسکتا‘

اسلام آباد: الیکشن کمیشن میں بلاول بھٹو کے گوشواروں میں تضاد کے معاملے پر الیکشن کمیشن نے بلاول بھٹو کے وکیل کو 15 روز کے اندر گوشواروں میں تضاد دور کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے سماعت 6 فروری تک ملتوی کردی۔ دوسری جانب الیکشن کمیشن نے فریال تالپور کے خلاف نااہلی کی درخواست عدم پیروی کے باعث خارج کر دی۔

تفصیلات کے مطابق الیکشن کمیشن میں بلاول بھٹو کے گوشواروں میں تضاد کے معاملے پر قائم مقام چیف الیکشن کمشنر کی سربراہی میں دو رکنی کمیٹی نے کیس کی سماعت کی۔ بلاول بھٹو کی جانب سے فاروق ایچ نائیک الیکشن کمیشن کے سامنے پیش ہوئے اور الیکشن کمیشن کے اختیار پر اعتراض اٹھا دیا اور دلائل دیے کہ الیکشن ایکٹ  کے تحت الیکشن کمیشن گوشواروں تضاد پر کرپٹ پریکٹس کے تحت کاروائی نہیں کرسکتا۔

ممبر الیکشن کمیشن ارشاد قیصر نے ریمارکس دیے اگر کوئی رکن اثاثہ جات چھپائے یا غلط بیانی کرے تو کرپٹ پریکٹسز کے تحت کاروائی بنتی ہے۔ اس پر فاروق ایچ نائیک بولے الیکشن کمیشن تضاد پر صرف وضاحت مانگ سکتا ہے۔ اثاثہ جات میں تضاد کو کرپٹ پریکٹسز کا ساتھ جوڑنا درست نہیں۔ الیکشن کمیشن نے بلاول بھٹو کے وکیل کو 15 روز میں تضاد دور کرنےکی ہدایت کرتے ہوئے کیس کی سماعت 6 فروری تک ملتوی کردی۔

دوسری جانب الیکشن کمیشن میں فریال تالپور نااہلی کیس میں انکے وکیل فاروق ایچ نائیک نے جواب جمع کراتے ہوئے الیکشن کمیشن کے دائرہ اختیار پر اعتراض اٹھا دیا۔ الیکشن کمیشن نے عدم پیروی کے باعث فریال تالپور کے خلاف نااہلی کی درخواست خارج کر دی۔ رکن سندھ اسمبلی ارسلان تاج نے فریال تالپور کی نااہلی کی درخواست دائر کر رکھی تھی۔

آئی ڈی: 2020/01/14/3217

اپنا تبصرہ بھیجیں