پاکستان نے بھارتی چیف آف ڈیفنس کا غیر ذمہ دارانہ بیان مسترد کردیا


اسلام آباد: پاکستان نے بھارتی چیف آف ڈیفنس کا غیر ذمہ دارانہ بیان مسترد کردیا ‏ترجمان دفتر خارجہ نے کہاکہ مقبوضہ کشمیر میں ریاستی دہشتگردی کرنے والا ‏بھارت، انسداد دہشتگردی کا پرچار کیسے کر سکتا ہے۔بھارت ایف اے ٹی ایف ‏کی تکنیکی کارروائی کو سیاست زدہ کر رہا ہے ۔

تفصیل کے مطابق پاکستان نے بھارتی چیف آف ڈیفنس جنرل بپن راوت کا غیر ذمہ دارانہ بیان مسترد ‏کردیا۔ترجمان دفتر خارجہ نے کہا کہ جنرل بپن کا بیان انتہا پسند ذہنیت، ‏دیوالیہ سوچ کا عکاس ہے۔بیان ثبوت ہے کہ انتہا پسندی، سوچ کا دیوالیہ پن ‏بھارتی ریاستی اداروں میں کتنا سرایت کر چکا۔مقبوضہ کشمیر میں ریاستی ‏دہشتگردی کرنے والا بھارت، انسداد دہشتگردی کا پرچار کیسے کر سکتا ‏ہے۔بھارت نے 5 اگست کو ی کطرفہ غاصبانہ اقدام سے مقبوضہ جموں و کشمیر ‏کا تشخص بدلا۔مقبوضہ جموں و کشمیر میں ایفسپا اور پبلک سیفٹی ایکٹ ‏جیسے کالے قانون نافذ کیے گئےبھارت مقبوضہ علاقوں میں انسانی حقوق کی ‏سنگین پامالیوں کا مرتکب ہو رہا ہے۔مقبوضہ جموں و کشمیر پہلے ہی 80 لاکھ ‏افراد کی دنیا کی بڑے قید خانے میں بدل چکا۔بھارت نے 9 لاکھ فورسز سے ‏غاصبانہ قوانین کے تحت 13 ہزار کشمیری بچو‍ں کو گھروں سے اٹھا کر قید ‏کیا۔آج بھارتی چیف آف ڈیفنس ان بچوں کو کیمپوں میں انسداد انتہا پسندی ‏کا ڈرامہ راچانا چاہتا ہے۔

بھارتی چیف آف ڈیفنس جنرل بپن روات کے بیان کی ‏صرف مذمت کافی نہیں۔بیان نے یہ بھی ثابت کیا کہ بھارت ایف اے ٹی ایف کی ‏تکنیکی کارروائی کو سیاست زدہ کر رہا ہے۔ بھارت ایف اے ٹی ایف امور پر اثر ‏انداز ہو کر سیاسی مقاصد حاصل کرنا چاہتا ہے۔پاکستان پہلے ہی دنیا کو ‏بھارت کی مذموم مہم سے آگاہ کر چکا۔امید ہے ایف اے ٹی ایف رکن ممالک بھارت ‏کے منفی ہتھکنڈوں کو مسترد کریں گے۔جنرل بپن راوت نے اپنے بیان میں کہا ‏کشمیری بچوں کو انسداد انتہا پسندی کیمپس منتقل کرنے کی بات کی۔بھارتی ‏چیف آف ڈیفنس نے کہا اس عمل سے پاکستان کو ایف اے ٹی ایف میں بلیک لسٹ ‏کروایا جا سکتا ہے۔

 

آئی ڈی: 2020/01/18/3714

Leave A Reply

Your email address will not be published.