حج 2020 پالیسی تاحال منظور نہ کی جا سکی

اسلام آباد: سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے مذہبی امور کے اجلاس میں وزیر مذہبی امور کی عدم شرکت پر اظہار برہمی کیا گیا ہے۔ وفاقی وزیر کی عدما حاضری پر اجلاس ملتوی کر دیا گیا۔ کمیٹی کے اراکین نے اعتراض اٹھایا کہ حج پیکج میں اضافہ ہو رہا اور وزارت سنجیدہ نہیں۔ سیکرٹری مذہبی امور نے بتایا کہ ایک لاکھ 79 ہزار عازمین حج پر جائیں گے۔ اس سال نارتھ ریجن کا حج پیکج 5 لاکھ 50 ہزار، ساوتھ ریجن کا پیکج 5 لاکھ 45 ہزار ہو گا۔

مولانا غفور حیدری کی زیر صدارت سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے مذہبی امور کا اجلاس ہوا۔ کمیٹی نے وزیر کی عدم موجودگی پر اظہار برہمی کیا۔ سیکرٹری وزرارت نے بتایا کہ نور الحق قادری کراچی کے دورے پر ہیں۔ چیرمین کمیٹی نے کہا کہ اس طرح کا مذاق نہیں چل سکتا، جب حج پالیسی طے ہو رہی ہو۔ کراچی کا پروگرام زیادہ اہم ہے یا یہ کمیٹی؟ کمیٹی رکن عبدالکریم نے کہا کہ حج کرایوں میں اضافہ ہو رہا ہے، لوگ چیخ رہے ہیں، چیختے رہیں، انہیں کیا فرق پڑتا ہے۔ کمیٹی ارکان نے کہا کہ جب تک وزیر نہیں آتے ایجنڈے پر بات نہیں ہونی چاہیے۔ اجلاس وزیر کی شرکت تک موخر کر دیا جائے۔

کمیٹی ارکان نے کہا کہ حج پیکج میں اضافہ کیا جا رہا ہے اور وزارت سنجیدہ نہیں۔ سیکرٹری وزارت مذہبی امور نے بتایا کہ اس سال ایک لاکھ 79 ہزار عازمین حج جارہے ہیں۔ حج پیکج میں اس سال ایک لاکھ 15 ہزار اضافہ کیا ہے۔ اس سال نارتھ ریجن کا حج پیکج 5 لاکھ 50 ہزار، ساوتھ ریجن کا پیکج 5 لاکھ 45 ہزار ہو گیا ہے۔ گذشتہ سال 4 لاکھ 33 ہزار تک حجاج سے لیے۔ بچنے والے پیسے ہر حاجی کو واپس کیے گئے۔

کمیٹی کا اجلاس وزیر کی عدم حاضری کے باعث ملتوی کردیا گیا۔ میڈیا سے گفتگو میں چیئرمین کمیٹی بولے کہ وزیر اجلاس میں نہ آئے تو حج پالیسی کو مسترد کر دیں گے۔ اگر وزارت اجلاس میں نہ آئی تو قانون و آئینی طریقہ کار کے مطابق کارروائی کی جاسکتی ہے۔

 

آئی ڈی: 2020/01/23/4040

متعلقہ خبریں

Leave a Comment