نیشنل کالج آف آرٹس؛ فاٹا کے طلبا کا کوٹہ دوگنا کرنے کا فیصلہ

National College of Arts-Lahore-FATA Students-Quota

اسلام آباد: نیشنل کالج آف آرٹس لاہور نے فاٹا کے طلبا کا کوٹہ آئندہ سال سے دوگنا کرنے کا فیصلہ کر لیا۔ سینیٹ کی قائمہ کمیٹی سیفران نے این سی اے کے لیے کالج عمارت کے ساتھ ملحقہ پنجاب پبلک لائبریری حوالے کرنے کی سفارش کر دی۔

چئیرمین تاج آفریدی کی صدارت میں ہونے والے سینٹ کی قائمہ کمیٹی سیفران کے اجلاس میں فاٹا کے طلبا کا کوٹہ دوگنا کرنے سے متعلق بحث ہوئی۔ پرنسپل نیشنل کالج آف آرٹس پروفیسر مرتضیٰ جعفری نے کمیٹی کو بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ نیشنل کالج آف آرٹس ایک قدیمی اور تاریخی ادارہ ہے جو ملک کی ترقی میں اہم کردار ادا کرتا رہا ہے۔ 2017 میں کابینہ نے فاٹا انضمام کے بعد ملک بھر میں تمام تعلیمی اداروں میں فاٹا کے طلبا کا کوٹہ ڈبل کرنے کا جو فیصلہ کیا تھا، اسے دل سے مانتے ہیں۔ لیکن فاٹا کا خیبر پختونخواہ میں انضمام کے بعد این سی اے میں طلبہ کا کوٹہ ڈبل کرنے کی خواہش کے باوجود بھی ایسا کرنا ممکن نہیں ہو سکا، کیونکہ ہمارے پاس کالج کی جگہ انتہائی کم ہے۔

پرنسپل این سی اے نے کہا کہ متعدد بار دورہ کرنے والے صدور اور وزرائے اعظم سے ہم نے بارہا درخواست کی کہ این سی اے کے پاس جگہ کی کمی ہے، جبکہ کالج کے ساتھ ملحقہ پنجاب پبلک لائبریری کی عمارت گزشتہ چند سالوں سے خالی پڑی ہے، جسے این سی اے کے حوالے کیا جائے تاکہ کالج کی لائبریری اسی میں شفٹ کرا لیں جہاں طلبا اور عوام الناس مل کر کتابوں سے مستفید ہوں۔

کمیٹی چیرمین تاج آفریدی نے کہا کہ قبائلی طلبا کو درپیش مسائل کے حل کی ہر فورم پر کوشش کریں گے۔ انہوں کہ این سی اے کو پنجاب پبلک لائبریری کی عمارت دلانے کے لئے بھرپور کوشش کریں گے۔ پرنسپل مرتضی جعفری نے کمیٹی کو یقین دلایا کہ اس سال داخلے مکمل ہوچکے ہیں۔ ائندہ تعلیمی سال کے موقع پر فاٹا کے طلبا کا کوٹہ دوگنا کیا جائے گا۔

 

آئی ڈی: 2020/03/02/5867

متعلقہ خبریں

Leave a Comment