افغانستان میں بم دھماکوں کی آواز میں بیک وقت دو صدور کی حلف برداریاں

صدر اشرف غنی اور ان کے سیاسی مخالف چیف ایگزیکٹو عبداللہ عبداللہ دونوں اپنی متوازی حلف برداریوں میں مصروف تھے کہ دھماکوں کی آواز سنائی دی، جس کے بعد افراتفری پھیل گئی۔

افغانستان کے دارالحکومت کابل میں آج ہونے والی دو متوازی صدارتی حلف برداریوں کے ساتھ شہر میں دو دھماکے بھی سنے گئے۔ افغانستان کے میڈیا کے مطابق مارٹر بم صدارتی پارکنگ ایریا میں گرے ہیں، اس حملے میں کوئی جانی نقصان نہیں ہوا ۔ جب اشرف غنی تقریر کر رہے تھے کہ عین اسی وقت دھماکوں کی آواز سنائی دی تو اشرف غنی نے اپنی تقریر جاری رکھی اور کہا: ’میں نے کوئی بلٹ پروف جیکٹ نہیں پہن رکھی، صرف شرٹ پہنی ہے، میں یہیں پر رکوں گا چاہے اس کے لیے مجھے اپنی جان ہی کیوں نہ دینی پڑے‘۔ حلف برداری کی دونوں تقاریب میں سینکڑوں افراد موجود تھے۔ اشرف غنی کی تقریب حلف برداری میں متعدد غیر ملکی سفارت کاروں اور اہم سیاسی رہنماؤں نے ایک بڑی تعداد نے بھی شرکت کی۔

اشرف غنی کے صدارتی ترجمان صدیق صدیقی نے ٹوئٹر پر جاری پیغام میں کہا: ’سب لوگ محفوظ ہیں اور اشرف غنی سمیت کوئی بھی زخمی نہیں ہوا۔‘

گذشتہ برس ستمبر میں ہونے والے انتخابات میں اشرف غنی کو فاتح قرار دیا گیا تھا مگر عبداللہ عبداللہ نے نتائج ماننے سے انکار کر دیا تھا۔  عبداللہ عبداللہ نے آج اپنے ساتھیوں کی موجودگی میں صدارتی حلف بھی اٹھا لیا ہے ۔ اس حملے کی ابھی تک کسی نے زمہ داری قبول نہیں کی۔ یاد رہے پچھلے مہینے کے آخر میں طالبان اور امریکہ کے درمیان امن معاہدے کے بعد طالبان نے افغان حکومت پر پرتشدد حملے جاری رکھنے کا اعلان کیا تھا۔

 

آئی ڈی: 2020/03/09/6107

متعلقہ خبریں

Leave a Comment