وفاقی ٹیکس محتسب کا ڈکلیئریشن جمع کرانے سے متعلق کیسز کا نوٹس


اسلام آباد: وفاقی ٹیکس محتسب  نے ٹیکس    ایمنسٹی  سکیم  میں ٹیکس چالان جمع کرنے کے باوجود ڈکلیئریشن جمع کرانے سے محروم رہ جانے والے کیسسز سے متعلق از خود نوٹس لیا ہے۔ سسٹم میں فنی خرابی کے باعث 12 ہزار افراد اثاثے ڈیکلیئر کرنے سے محروم ہوئے خزانے کو 2 ارب 60 کروڑ روپے کا نقصان ہوا

وفاقی ٹیکس محتسب کا کہنا ہے کہ تقریبا300 افراد نے وفاقی ٹیکس محتسب آفس میں شکایات درج کرائی ہیں۔ شکایت گزاروں کا موقف ہے کہ   12ہزارافرادنے سال 2019 میں ڈیڈ لائن  3 جولائی 2019 سے پہلے حکومت کو تقریبا 2.6 ارب روپے کا ٹیکس  جمع کرایا، لیکن ایف بی آر کے آن لائن سسٹم کی خرابی کی وجہ سے اثاثہ جات ڈیکلیئر کرنے میں ناکام رہے۔ 

وفاقی ٹیکس محتسب نے معاملے کا از خود نوٹس لیتے ہوئے ایف بی آر سے  متاثرہ ٹیکس گزاروں کا ڈیٹا طلب کیا ہے۔ وفاقی ٹیکس محتسب کے مطابق ٹیکس گزاروں کو مناسب ٹیکنیکل سہولیات دینا ایف بی آر کی بنیادی ذمہ داری ہے جس کی فراہمی میں ایف بی آر ناکام ہوا اور متاثرہ ٹیکس گزاروں کو ایمنسٹی سکیم سے مستفید ہونے کی اجازت نہیں دی جارہی۔

دسمبر 2019 میں پاکستان ٹیکس بار ایسوسیشن کے ایک وفد نے وفاقی ٹیکس محتسب سے  ملاقات کے دوران اس معاملے میں از خود نوٹس لینے کی اپیل کی تھی۔ وفاقی ٹیکس محتسب نے ایف بی آر کے ممبر ان لینڈ ریونیو(آپریشنز)،ممبر لیگل،ممبر انفارمیشن ٹیکنالوجی اور ممبر ان لینڈ ریونیوپالیسی کو طلب کرنے  کے نوٹسز جاری کر دئیے ہیں۔

 

آئی ڈی: 2020/03/10/6125

Leave A Reply

Your email address will not be published.