کورونا وائرس کی وجہ سے ملکی معیشت کو بڑا دھچکا لگنے کا خدشہ


اسلام آباد: کورونا وائرس کی وجہ سے ملکی معیشت کو بڑا دھچکا لگنے کا خدشہ پیدا ہوچکا ہے ، ذرائع کا کہنا ہے کہ اگر کورونا وائرس نے انتہائی شدت اختیار کی تو معیشت کا بٹھا بیٹھ جائے گا ، ملکی معیشت کو رواں سال پانچ ارب ڈالرز کا نقصان پہنچ سکتا ہے جب کہ جی ڈی پی 1.5 فیصد تک کم ہوسکتی ہے ، ذرائع کا کہنا ہے کہ ایف بی آر کی ٹیکس وصولیوں میں ماہانہ  100 ارب روپے کی کمی ہوسکتی ہے ایف بی آر کے محاصل میں مزید 300 ارب روپے کی کمی ہوگی اور ٹیکس شارٹ فال مزید بڑھ سکتا ہے ، کورونا وائرس کی وجہ سے تیل کی درآمد 14 فیصد کم ہوچکی ہے جب کہ ملکی درآمدات میں کمی ہورہی ہے بندرگاہوں اور ایئرپورٹس سے ٹیکس وصولی کم ہورہی ہے اور لگژری اشیاء کی درآمدات بھی کم ہوچکی ہیں ٹیکس محصولات کم ہونے سے مہنگائی میں اضافہ ہوسکتا ہے ملکی معیشت سست ہونے سے رواں سال بجٹ خسارہ بڑھ سکتا ہے۔

کرونا سے نمٹنے کے لیے وزارت خزانہ نے این ڈی ایم کو 5 ارب روپے کے فنڈز جاری کردیے ہیں جب کہ اے ڈی بی اور ورلڈ بینک کے منصوبوں کے غیر استعمال شدہ فنڈز بھی این ڈی ایم کو دیے جائیں گے ذرائع کا کہنا ہے کہ بین الاقوامی اداروں سے رابطہ رکھا جارہا ہے وزارت صحت کی ڈیمانڈز کا جائزہ لیا جارہا ہے  قومی سلامتی کمیٹی کے فیصلوں پر عمل درآمد یقینی بنایا جارہا ہے۔


Comments are closed.