وفاقی حکومت نے 152 ارب روپے کے پانچ بڑے ترقیاتی منصوبوں کی منظوری دے دی۔

اسلام آباد: وفاقی حکومت نے کرتار پور راہداری سمیت 152 ارب روپے کے پانچ بڑے ترقیاتی منصوبوں کی منظوری دے دی۔

قومی اقتصادی کونسل کی ایگزیکٹو کمیٹی  نے ونڈر ڈیم پراجیکٹ، ڈیرہ بگٹی میں کچھی کینال منصوبہ، پاکستان ریونیو پراجیکٹ ، کرتار پور راہداری اور لاہور و فیصل آباد میں نکاسی آب کے جامع منصوبوں کی منظوری دے دی ہے۔ ایکنک کا اجلاس مشیر خزانہ ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ کی زیر صدارت کابینہ ڈویژن میں منعقد ہوا۔ اجلاس میں بلوچستان کے ضلع لسبیلہ میں دریائے ونڈر پر ونڈر ڈیم پراجیکٹ کی منظوری دےدی گئی، اس منصوبہ پر 15 ارب 23 کروڑ روپے لاگت آئے گی، اس منصوبہ کیلئے کمانڈ ایریا ڈویلپمنٹ اور اراضی کے حصول کا کام بیک وقت حکومت بلوچستان شروع کرے گی۔ یہ منصوبہ چار سال کے عرصہ میں مکمل کئے جانے کا امکان ہے۔ اجلاس میں بلوچستان کے ضلع ڈیرہ بگٹی میں دو ارب 29 کروڑ روپے کی لاگت سے کچھی کینال کے باقی ماندہ کام کی منظوری بھی دی گئی۔ اجلاس میں پاکستان ریزز ریونیو پراجیکٹ بشمول آئی پی ایف کی بھی منظوری دی گئی، اس منصوبہ پر12 ارب 48 کروڑ روپے کی لاگت آئے گی یہ منصوبہ عالمی بینک کے تعاون سے آئی ڈی اے کے 400 ملین ڈالر نرم شرائط پر قرضہ کا حصہ ہے۔اجلاس میں ضلع نارووال میں گردوارہ کرتاپور صاحب کی ڈویلپمنٹ سے متعلق منصوبہ کی روبہ ماضی منظوری بھی دی گئی۔ اس منصوبہ کی لاگت  16 ارب 54 کروڑ روپے ہے۔ اجلاس میں لاہور واٹر اینڈ ویسٹ واٹر مینجمنٹ پراجیکٹ کی بھی منظوری دی گئی۔ اس منصوبہ پر 14 ارب 43 کروڑ روپے کی لاگت آئے گی۔ اجلاس میں فیصل آباد سٹی کیلئے ویسٹ واٹر ٹریٹمنٹ پلانٹ کی منظوری بھی دی گئی۔ اس منصوبہ پر  19 ارب روپے کی لاگت آئے گی،وزیراعظم کے مشیر نے وفاقی وزیر اقتصادی امور اور ڈپٹی چیئرمین پلاننگ کمیشن پر مشتمل کمیٹی کے قیام کی ہدایت کی۔ کمیٹی شفاف طریقہ سے ضروری امداد کی صوبوں کے مابین اور حکومت پاکستان کی ترجیحات کے مطابق تقسیم کو یقینی بنانے کیلئے طریقہ کار وضع کرے گی۔

متعلقہ خبریں