کورونا وائرس: یہ عوام کب عقلمندی کا مظاہرہ کرے گی؟

مومنہ خاور


چین کے شہر ووہان میں پہلی بار نمودار ہونے والے وائرس سے اب تک دنیا بھر میں آٹھ لاکھ افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔
کورونا وائرس ایک ایسی وباء بن چکی ہے جس کی گرفت میں پوری دنیا کی عوام آگئی ہے اور یہ بیماری ایک جان لیوا بیماری بن چکی ہے جو تقریباَ آٹھ لاکھ سے زائد لوگوں کو کھا چکی ہے۔ بہت سے ممالک اس بیماری سے نمٹنے کیلئے مختلف اقدامات کر رہے ہیں۔ کچھ لوگ تو اس بیماری سے بہت خوف میں نظر آرہے ہیں لیکن کچھ آج بھی اس بیماری کو ایک معمولی بیماری سمجھتے ہوئے آرام سے سڑکوں پر دندناتے پھرتے ہیں۔ ایسے ہی کچھ ہمارے علاقہ کے حالات ہیں جہاں زائد عوام تو اپنے گھروں میں بیٹھ کر حکومت کے بتائے ہوئے اقدامات پر عمل کر رہے ہیں لیکن کچھ آج بھی موٹرسائیکل پر سوار، دکانوں پر ساتھ جڑکر کھڑے ہوتے ہیں یا اپنے بچوں کو بھی اپنے ساتھ گاڑیوں میں بٹھا کر گھما رہے ہیں۔۔ ناجانے یہ عوام کب عقلمندی کا مظاہرہ کرے گی؟ ہر جگہ پرائم منسٹر کو تنقید کا نشانہ بناتے ہیں آخر کبھی یہ سوچا ہے کہ ہم خود کتنا اپنے ملک کیلئے کام کر رہے ہیں؟ ہم کتنا اس ملک کے لئے اپنے وزیراعظم کے بتائے ہوئے فیصلوں پر عمل کر رہے ہیں۔ ہم ہر جگہ دوسرے ملکوں کی بہت تعریف کرتے ہیں لیکن کبھی ہم نے بحیثیت ایک شہری اور پاکستانی بن کر اس ملک کیلئے کچھ کیا ہے۔ آخر یہ عوام کیوں نہیں سمجھ رہی کہ یہ بیماری چھوت کی بیماری ہے جو ایک انسان سے دوسرے انسان میں پھیلتی ہے اسی لئے وزیراعظم عمران خان نے لاک ڈاؤن کیا ہے اور یہ لاک ڈاؤن صرف لوگوں کی حفاظت کیلئے لگایا گیا ہے جو کہ 14 اپریل تک ہے۔ اس لئے اب لوگوں کو سمجھنا چاہیئے کہ گھروں میں رہیں گے تو محفوظ رہیں گے۔۔ اگر کچھ آبادی گھر میں بیٹھ کر اپنا حق پورا کر رہی ہے تو باقیوں کو بھی چاہئیے کہ باہر جاکر (وی کانٹ لیو آوٹ ہوم) کے اسٹیٹس لگانے کی بجائے گھروں میں رہ کر باقی عوام کا ساتھ دیں جن کے کاروبار لاک ڈاؤن کی وجہ سے رکے پڑے ہیں جو دہاڑی دار مزدور ہیں جن کی دکانیں بند ہیں۔۔ یہ ایک مشکل وقت ہے جو ہمیں مل کر پار کرنا ہے اور پوری دنیا کو بتانا ہے کہ ہاں ہم ایک متحد قوم ہیں اور ہر قسم کی پریشانی اور مشکلات کا سامنا کر سکتے ہیں۔ اس لئیے گھر بیٹھیں اور قرآن مجید پڑھیں اور آللہ پاک سے اپنے گناہوں کی معافی مانگیں۔
فرمان باری تعالیٰ ہے
یہ قرآن جو ہم نازل کر رہے ہیں مومنوں کیلئے تو سراسر شفا اور رحمت ہے۔


Leave A Reply

Your email address will not be published.