وزارت انسانی حقوق کی جیلوں میں کرونا وائرس سے متعلق اقدامات پر مبنی رپورٹ سپریم کورٹ میں جمع

اسلام آباد: وزارت انسانی حقوق نے جیلوں میں کورونا وائرس سے متعلق اقدامات پر مبنی رپورٹ سپریم کورٹ میں جمع کرا دی،رپورٹ میں کہا گیا کہ پنجاب  کی 41 جیلوں میں 32477 قیدیوں کی گنجائش ہے جبکہ 45324 قیدی موجود ہیں، سندھ کی 24جیلوں میں 13538 قیدیوں کی گنجائش ہے جبکہ 16315 قیدی موجود ہیں۔

رپورٹ کے مطابق کے پی کی20 جیلوں میں4519 قیدیوں کی گنجائش ہے جبکہ 9900 قیدی موجود ہیں، بلوچستان کی جیلوں میں 2585 قیدیوں کی گنجائش ہے جبکہ 2122 قیدی موجود ہیں، پنجاب کی جیلوں میں 64 مرد اور 23 خواتین ڈاکٹرز موجود ہیں جبکہ 36 مرد اور 9 خواتین کی آسامیاں خالی ہیں، سندھ کی جیلوں میں 47 مرد اور 7 خواتین ڈاکٹرز موجود ہیں جبکہ 31 مرد اور 6 خواتین کی آسامیاں خالی ہیں، رپورٹ میں کہا گیا کہ کے پی کی جیلوں میں 31 مرد اور 5 خواتین ڈاکٹرز موجود ہیں جبکہ17 مرد اور 2 خواتین کی آسامیاں خالی ہیں، بلوچستان کی جیلوں میں 12 مرد اور 4 خواتین ڈاکٹرز موجود ہیں جبکہ 4 مرد اور 3 خواتین کی آسامیاں خالی ہیں، کے پی میں یکم مارچ 2020 سے قبل پشاور ہائیکورٹ کے فیصلے پر 3228 قیدی ضمانت پر رہا ہوچکے ہیں،
پنجاب کی جیلوں قید بچے 90 کے پی میں 50 سندھ میں 23 ہیں،رپورٹ میں بتایا گیا کہ پنجاب میں ذہنی امراض میں مبتلا قیدیوں کی تعداد 298، سندھ میں50، کے پی میں 235 جبکہ بلوچستان میں11ہیں۔ رپورٹ کے مطابق ملک بھر کی تمام جیلوں میں کورونا وائرس سے آگاہی سے متعلق بینرز لگائے گئے ہیں اور جیلوں میں مقیم قیدیوں اور سٹاف کےلئے حفاظتی اقدامات جاری کیے گئے ہیں، قیدیوں کی رھائی سے متعلق کیس کی سماعت کل ہوگی۔چیف جسٹس کی سربراہی میں پانچ رکنی لارجر بنچ کیس کی  سماعت کریگا۔

متعلقہ خبریں

Leave a Comment