پی آئی اے کے چار پائلٹس میں بھی کورونا وائرس کی موجودگی کا شبہ

کراچی: پی آئی اے کے چار پائلٹس میں بھی مبینہ طور پر کورونا وائرس میں مبتلا ہوگئے۔
مشتبہ کا ک پٹ کریو کراچی ائرپورٹ سے نجی ہوٹل میں منتقل کردیا گیا۔ دو پائلٹس اور دو فرسٹ افسر برطانیہ سے فیری پرواز کے بعد کراچی پہنچے تھے۔ مشتبہ کاک پٹ کریو نے اسلام آباد سےبرطانیہ کے لئے خصوصی پرواز آپریٹ کی تھی۔ کاک پٹ کریو کے نمونے لئے جارہے ہیں۔ رپورٹ پازیٹو ہونے کی صورت میں کریو کو قرنطینہ کیا جائے گا۔
پی آئی اے کے فضائی عملے کو کراچی میں قرنطینہ کرنے کا معاملے ہر پی آئی اے نے وضاحت دیتے ہوئے کہا ہے کہ پی آئی اے حکومت پاکستان کے مقرر اور وضح کردہ ہدایات پر سختی سے عمل پیرا ہے۔ کراچی ائیرپورٹ پر پیش آنے والے واقعہ عملے سے متعلق حکومت پاکستان کی ہدایات کے منافی ہے۔ خالی جہاز لندن سے واپس آنے سے 3 گھنٹے قبل تمام حکام کو اطلاع کردی گئی تھی۔ تاہم ہدایات کے باوجود محکمہ صحت سندھ کے عملے نے کپتانوں کو زبردستی قرنطینہ کرنے پر اصرار کیا

ہدایات کے منافی سلوک پر سی ای او پی آئی اے ائیر مارشل ارشد ملک نے شدید تحفظات کا اظہار کیا۔ ای او ارشد ملک کا کہنا ہے کہ پی آئی اے کا فضائی عملہ قومی ہیروز ہیں جو خطرات کے باوجود بیرون ملک پھنسے پاکستانیوں کو وطن واپس لانے کی خدمات سرانجام دے رہیں ہیں ہے۔ پی آئی اے اپنے ان ہیروز کی ہر ممکنہ حفاظت کو یقینی بنائے رکھے ہوئے ہے اور کسی قسم کا سمجھوتا نہیں کرتی۔ ترجمان پی آئی اے عبداللہ خان کے مطابق پی آئی اے اعلی حکام سے مسلسل رابطے میں ہے۔ فضائی عملے میں کرونا وائرس کی موجودگی کی اطلاعات گمراہ کن ہیں جن میں کوئی صداقت نہیں ۔ فضائی عملے پی آئی اے کے ہوٹل میں ائیسولیشن میں ہے اور ٹسٹ کے نتائج کی منتظر ہے۔ جب تک ائیرپورٹس پر حکومت پاکستان کی وضح کردہ ہدایات میں ہم آہنگی نہیں آتی سی ای او پی آئی اے نے کراچی سے فضائی آپریشن معطل کرنے کے احکامات جاری کردئیے۔

متعلقہ خبریں

Leave a Comment