تحقیقاتی کمیشن کو دھمکیوں پر وزیر اعظم کا شدید رد عمل، فردوس عاشق نے سخت بیان دے دیا


اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان کی معاون خصوصی برائے اطلاعات و نشریات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے وفاقی کابینہ کے اجلاس کے بعد بذریعہ انٹرنیٹ میڈیا بریفنگ میں کہا ہے کہ وزیر اعظم 25 اپریل کوتحقیقاتی کمیشن کی حتمی رپورٹ سامنے آنے پر ایکشن لیں گےاور وہ کسی کو بھی انصاف کی فراہمی میں رکاوٹ نہیں بننے دیں گے۔ ان کا کہنا تھا کہ تحقیقاتی کمیٹی  نے نظام میں خرابیوں کی نشاندہی کی اور شوگر پالیسی پر بھی سوالات اٹھائے۔
معاون خصوصی نے کہا  کہ وزیراعظم عمران خان نے کمیشن کو ملنے والی دھمکیوں پر برہمی کا اظہار کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وزیرعظم نے اس سلسلے میں سخت کارروائی کرنے کا عندیہ بھی دیا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ مستقبل میں مصنوعی بحران سے بچنے کے لیے اصلاحات لائی جائیں گی۔ وزیراعظم کی معاون خصوصی برائے اطلاعات و نشریات نے بتایا کہ وفاقی کابینہ میں چینی بحران پر رپورٹ وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے احتساب شہزاد اکبر نے پیش کی۔
ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان کا مزید  کہنا تھا کہ شوگرملز نے اضافی ذخائرکی وجہ سے گنا خریدنے سےانکارکیا۔ ان کا کہنا تھا کہ وزیراعظم نے کاشت کاروں کےمسائل حل کرنے کی ہدایت کی ہے۔

ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ وفاق کی جانب سے چینی کی برآمد پرسبسڈی نہیں دی گئی۔ اس ضمن میں ان کا کہنا تھا کہ شوگرملزکے نمائندہ وفد نے2017 میں ن لیگ کے شاہد خاقان عباسی سے ملاقات کی تھی اور اس ملاقات میں وفد نے شوگرملز کے لیے 20 ارب روپے کی سبسڈی منظور کرائی تھی۔ ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے بات کرتے ہوئے مزید کہا کہ 2014 سے 2016 کےدرمیان کئی شوگرملز کو سبسڈی دی گئی۔ موجودہ حکومت کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ 2014 کے بعد پہلی مرتبہ گنے کی قیمت میں اضافہ کیا اور اس کا مقصد کاشتکاروں کوفائدہ دینا تھا۔


Leave A Reply

Your email address will not be published.