لاک ڈاؤن: گھروں میں رہنےکی وجہ سے طلاق کی شرح میں اضافہ


اسلام آباد: عالمی خبر رساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق دنیا بھر میں کورونا وائرس کی وجہ سے شہریوں کو گھروں میں رہنا پڑا یہاں تک کہ شادی شدہ جوڑے ایک دوسرے سے اکتا گئے اور جھگڑے معمول کا حصہ بن گئے۔ پاکستان میں بھی علماء اور حکومت نے بیویوں سے اپیل ہے کہ گھروں میں شوہروں سۓ محبت سے پیشش آئیں۔

عالمی رپورٹ کے مطابق کورونا وائرس کی وجہ سے لاک ڈاون کے دوران پاکستان سمیت دنیا بھر جبکہ یورپ میں طلاق کی شرح میں ہوشربا اضافہ دیکھا گیا ہے۔

صرف یورپ میں 24 فروری سے تاحال صرف ایک صوبے میں30000 جوڑوں نے طلاق کے لیے رجسٹرار آفس سے رجوع کیا ہے جو گزشتہ برس کی مکمل تعداد سے بھی کہیں زیادہ ہے۔

صوبے کے میرج رجسٹر آفیسر کا کہنا ہے کہ طلاق کے حصول کے لیے درخواست دینے والوں میں اکثریت نوجوان جوڑوں کی ہے جو ایک ہی مقام پر ایک ساتھ رہتے رہتے تنگ آگئے اور مزاج میں چڑاچڑاہٹ آگئی جو جھگڑے کا باعث بنی۔

سیچوان کے علاوہ دیگر صوبوں میں بھی طلاق کے لیے جوڑوں نے میرج رجسٹرار سے رابطہ کیا ہے۔


Leave A Reply

Your email address will not be published.