وفاقی کابینہ: ذخیرہ اندوزی کے خلاف آرڈیننس کی منظوری دے دی


 وفاقی کابینہ نے ذخیرہ اندوزی کے خلاف آرڈیننس کی منظوری دے دی۔

رپورٹ کے مطابق آرڈیننس کا اطلاق وفاقی دارالحکومت اسلام آباد کی حدود میں ہو گا۔

آرڈیننس میں چائے، چینی، دودھ، پاؤڈر ملک، شیر خوار بچوں کی خوراک، خوردنی تیل، بوتل شدہ پانی، فروٹ جوس، شربت، نمک، آلو، پیاز، دالیں، مچھلی، گوشت، انڈے، گڑ، مصالحہ جات، سبزیاں ، سرخ مرچ، دوائیاں، مٹی کا تیل، چاول گندم اور آٹا کی ذخیرہ اندوزی کی ممانعت کی گئی۔

آرڈیننس میں کیمیکل والی کھاد، پولٹری فوڈ، سرجیکل دستانے، ماسک بشمول این 95 ماسک، سینیٹائزر، جراثیم کش ادویات، ماچس اور آئی سو پروپائل الکوحل کی ذخیرہ اندوزی کی بھی نشاندہی کی گئی۔

آرڈیننس کے مطابق ذخیرہ اندوزی  پر تین سال قید کی سزا ہو گی جبکہ ضبط شدہ سامان کا 50 فیصد جرمانہ ادا کرنا ہو گا۔ ملازمین کے بجائے مالکان کے خلاف کاروائی کی جائے گی۔

  علاوہ ازیں ذخیرہ اندوزی کی نشاندہی یا اطلاع دینے والے افراد کو ضبط کی جانے والی اشیاء کی مالیت کا دس فیصد بطور انعام دیا جائے گا۔


Leave A Reply

Your email address will not be published.