چن اور مختارے کو آڈیو لیک کرنیوالے شخص کی تلاش

اسلام آباد: وزیراعظم کے ترجمان ندیم افضل چن کی کچھ عرصہ قبل اپنے سپورٹر مختارے کو سینڈ کی جانیوالی آڈیو سوشل میڈیا پر لیک ہوگئی تھی۔

رپورٹ کے مطابق اس آڈیو کو سوشل میڈیا صارفین نے خوب انجوائے کیا۔مین سٹریم  میڈیا پر اس کا تذکرہ چلتا رہا ۔اس وٹس ایپ میسیج میں ندیم افضل چن کورونا وائرس کے پھیلائو کے پیش نظر مختارے کو گھر بیٹھنے کی تاکید کر رہے ہوتے ہیں۔

 اب ندیم افضل چن اپنے مختارے کو میڈیا پر سب کے سامنے لے کر آگئے ہیں۔ انہوں نے اپنے یو ٹیوب چینل پر مختارے سے پنجابی زبان میں گفتگو کی۔ انہوں نے بتایا کہ حکومت نے بھی کچھ نرمی کی ہے بڑے دنوں کے بعد میری اپنے مختارے کیساتھ ملاقات ہوئی بڑے دن یہ گھر رہا ہے میں نے سوچا کہ آج آپ کی بھی ملاقات کرائیں۔ حال احوال پوچھنے کے بعد گھر رہنے کے بارے میں ندیم افضل چن کے سوال پر مختارے نے بتایا کہ ان دنوں اچھا محسوس کیا آپ کے ساتھ 2007 سے لے کر اب تک ہوں اکیس دن پہلی دفعہ گھر رہا اچھا لگا۔ آپ کے میسج اور ڈرانے کی وجہ سے میں خود اور بچے بھی محفوظ رہے، آپ نے میری زندگی پربڑی مہربانی کی۔

ندیم افضل چن نے اس بارے میں کہا کہ وہ تو ٹھیک ہے لیکن اب آپ مشہور بھی بڑے ہوگئے ہیں مجھ سے بھی زیادہ۔ پھر مختارے نے ہنستے ہوئے کہا کہ بس روایتی میڈیا اور سوشل میڈیا نے مشہور کردیا۔ وزیر اعظم کے ترجمان نے آڈیو کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ  وہ ہمارا ذاتی معاملہ تھا عام حالات میں گالی دیتا بھی نہیں لیکن یہ بتائیں کہ وہ آڈیو لیک کیسے ہوئی َ جو میں نے آپ کو بھیجی تھی؟ اس پر مختارے نے قسم اٹھاتے ہوئے کہاکہ یہ میرے سے لیک نہیں ہوئی ، پتہ نہیں کہاں سے لیک ہوئی ؟ ندیم افضل چن نے کہاکہ یا تو آپ نے لیک کی ہے یا میں نے کی جس پر مختارے کا کہنا تھاکہ حلفاً کہہ سکتا ہوں کہ مجھ سے لیک نہیں ہوئی ۔

وزیراعظم کے ترجمان ندیم افضل چن نے بتایا کہ میرے سے بھی لیک نہیں ہوئی اور یہ کہتا ہے کہ مجھ سے بھی لیک نہیں ہوئی پھر ڈھونڈنی ضرور پڑے گی۔ واٹس ایپ کا وائس میسج بھی اگر لیک ہوتا ہے تو سوچنا پڑے گا کہ کیسے ہوتا ہے؟ مختارے کیساتھ ساتھ جہاں بڑی بڑی چیزیں ہوتی ہیں مختارے کے میسج سے بہتر کوئی آگاہی مہم نہیں ہوسکتی تھی لیکن یہ میرا پرسنل میسج تھا یہ بتانا اور ڈھونڈنا ضرور پڑے گا کہ یہ کیسے لیک ہوتا ہے جس پر مختارے نے بھی ہاں میں ہاں ملائی اور کہا کہ ضرور ڈھونڈنی چاہیے۔

متعلقہ خبریں

Leave a Comment