ایکسپورٹ انڈسڑی کی بندش کے معاملے پر وزیراعظم کو خط، نوٹس لینے کا مطالبہ

اسلام آباد: معاون خصوصی عثمان ڈار نے وزیراعظم عمران خان کو خط لکھ کر حکومتی اجازت کے باوجود ایکسپورٹ انڈسٹری کی بندش کا معاملہ اٹھا تے ہوئے وزیراعظم سے فوری نوٹس لینے کا مطالبہ کر دیا۔

تفصیل کے مطابق خط میں کہا گیا ہے کہ ایکسپورٹ انڈسٹری کھولنے کا فیصلہ حکومتی سطح پر کیا گیا۔ ڈھائی لاکھ مزدور انڈسٹری کی بندش کے باعث بیروزگار ہو چکے تھے۔ سیالکوٹ کے ایکسپورٹرز اور بیروزگار مزدوروں نے فیصلے کا خیرمقدم کیا۔

وزیراعظم کو خط میں بتایا گیا کہ بطور معاون خصوصی اپنی ذمہ داری پوری کرتے ہوئے حقائق وزیراعظم کے علم میں لانا چاہتا ہوں۔ کمشنر گوجرانوالہ سیالکوٹ کی ایکسپورٹ انڈسٹری کھولے جانے میں رکاوٹ ڈال رہے ہیں۔گوجرانوالہ ڈویژن میں کمپنیوں کو کھولنے کی اجازت دی جا رہی ہے۔ کمشنر گوجرانوالہ اور ضلعی انتظامیہ کے رویے سے اقرباء پروری کا تاثر عیاں ہو رہا ہے۔

خط میں بتایا گیا کہ کمشنر گوجرانوالہ سیالکوٹ کی ایکسپورٹ انڈسٹری ساتھ امتیازی سلوک کر رہے ہیں۔ دوسرے اضلاع میں فیکٹریاں کھل چکی لیکن سیالکوٹ میں حالات معمول پر نہیں آ سکے۔

کمشنر گوجرانوالہ حکومت کے فیصلوں پر عمل درآمد کی بجائے اپنے ذاتی ایجنڈے پر عمل پیرا ہیں۔ سیالکوٹ ڈھائی ارب ڈالرز کی سالانہ ایکسپورٹس کر رہا ہے۔ حکومتی ہدایات پر عملدرآمد کے باوجود سیالکوٹ کی ایکسپورٹ انڈسٹری کو بندش کا سامنا ہےجبکہ فیصل آباد لاہور اور ملتان بھی فیکٹریوں کو کھولنے کی اجازت دے دی گئی۔

معاملہ کی سنگینی کے پیش نظر  فوری نوٹس لے کر انکوائری کا حکم دیا جائے۔ دوسری جانب سیالکوٹ میں تمام فیکٹریاں ابھی تک بند ہیں۔ سیالکوٹ کی صنعت اور ڈھائی لاکھ مزدور بری طرح متاثر ہو رہےہیں۔

متعلقہ خبریں

Leave a Comment