کیا ملیریا کی دوا کووڈ 19 کو کمزور کر سکتی ہے؟ رپورٹس کے نتائج سامنے آ گئے

کووڈ 19 کا علاج یا ویکسین تو اب تک دستیاب نہیں مگر امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ملیریا کے علاج کے لیے استعمال ہونے والی دوا کلوروکوئن کو اس کے لیے موثر قرار دیا تھا۔

رپورٹ کے مطابق پاکستان میں بھی  کورونا وائرس سے پیدا ہونے والے امراض کے لیے کلوروکوئن کے استعمال کے حوالے سے حتمی رائے کے لیے ماہرین کی ٹیم کی تشکیل دے دی گئی تھی۔

مگر ایسا لگتا ہے کہ یہ ادویات کووڈ 19 کے مریضوں کو فائدے کی بجائے نقصان زیادہ پہنچا رہی ہیں۔ کم از کم چین، فرانس اور برازیل میں ہونے والے ٹرائلز کے نتائج کچھ ایسے ہی رہے ہیں۔

کلوروکوئن اور ہائیڈروآکسی کلوروکوئن سے کسی حد تک کورونا وائرس کی علامات میں کمی لانے میں مدد ضرور ملی مگر ان ادویات سے دیگر اہم حصوں میں بہتری نظر نہیں آئی بلکہ مضر اثرات زیادہ خطرناک تھے۔

فرانس میں ہونے والی تحقیق کے دوران ہائیڈرو آکسی کلوروکوئن کا استعمال جن مریضوں کو کرایا گیا۔ ان میں اموات یا آئی سی یو میں داخلے کی شرح میں کوئی کمی دیکھنے میں نہیں آئی۔

اسی طرح چین اور برازیل میں ہونے والے الگ الگ ٹرائلز میں بھی دونوں ادویات تیزی سے کورونا وائرس سے صحتیابی میں مدد دینے میں ناکام رہیں۔

محققین نے اپنے نتائج میں کہا کہ ابتدائی شواہد سے عندیہ ملتا ہے کہ اس دوا کی زیادہ مقدار کا استعمال کا مشورہ کووڈ 19 کے علاج کے لیے نہیں دیا جاسکتا کیونکہ یہ نقصان دہ ثابت ہوسکتی ہے۔

متعلقہ خبریں

Leave a Comment