کورونا لاک ڈاون: جرمنی میں شوہروں کی دہائی پر ہیلپ لائن قائم

عالمی وبا کورونا وائرس کے باعث لگے لاک ڈاون  نے گھروں میں بند مردوں کا جینا محال کر دیا جرمنی میں مردوں کے گھریلو تشدد کا شکار ہونے پر ان کے لیے ہیلپ لائن قائم کر دی گئی۔

یوں تو دنیا بھرمیں کورونا وائرس کے بحران کے دوران زیادہ تر خواتین اور بچے ہی گھریلو تشدد کا نشانہ بن رہے ہیں لیکن جرمنی میں مردوں کو بھی گھریلو تشدد کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ اس وجہ سے جرمنی کے دو اہم صوبائی ریاستوں نارتھ رائن ویسٹ فیلیا اور بائرن نے مل کر متاثرہ مردوں کے لیے ٹیلیفون ہیلپ لائن کا آغاز کیا ہے۔ جرمنی میں ایسا پہلی مرتبہ ہوا ہے کہ مردوں کے لیے ہیلپ لائن قائم کی گئی ہے۔ متاثرہ مرد ایک ٹیلی فون نمبر پر مفت کال کر سکیں گے اور ان کی ہر ممکن مدد کی جائے گی۔ یہی نہیں بلکہ آئندہ ان صوبوں میں ایسے ‘محفوظ گھر’ بھی قائم کیے جائیں گے جہاں گھریلو زندگی میں تشدد کا شکار ہونے والے مردوں کو رہائش اختیار کرنے کا موقع بھی فراہم کیا جائے گا۔

خیال رہے ماہرین کے مطابق خواتین کے ہاتھوں تشدد کا نشانہ بننے والے مردوں کی اصل تعداد کہیں زیادہ ہے لیکن مرد شرمندگی کی وجہ سے ایسے تشدد کا ذکر کرنا مناسب نہیں سمجھتے۔

متعلقہ خبریں

Leave a Comment