زندہ دفنائی گئی خاتون قبر کو توڑ کر باہر نکل آئی

یوکرائن: اکثر اوقات دنیا بھر میں ایسی عجیب خبریں سامنے آتی ہیں جن پر فوری طور پر سب کا یقین کرنا مشکل ہو جاتا ہے۔ تاہم اسی طرح کی ایک خبر یوکرائن سے آئی ہے جس نے سب کو ورطہ حیرت میں ڈال دیا ہے۔برطانوی خبر رساں ادارے کے مطابق یہ واقعہ یوکرین کے وسطی شہر میں پیش آیا۔ خاتون کا نام نینا رودشینکو بتایا گیا ہے جس پر اس کے دو پڑوسیوں نے حملہ کیا۔ ان کی عمریں 27 اور 30 سال کے قریب تھیں جو نینا کے ہمسائے میں ہی رہتے تھے۔

خبر رساں ادارے کے مطابق نینا کو فوری طور پر ہسپتال پہنچایا گیا جہاں اس کا علاج جاری ہے۔ نینا کا کہنا ہے کہ دونوں ملزمان نے گھر میں داخل ہوتے ہی بغیر کچھ کہے مجھے تشدد کا نشانہ بنانا شروع کر دیا۔ نہیں جانتی کہ انہوں نے ایسا کیوں کیا۔ پھر وہ مجھے گھسیٹتے ہوئے اپنے گھر لے گئے اور وہاں تشدد کرتے رہے۔

خاتون کا کہنا ہے کہ ملزمان اس کے گھر کا دروازہ توڑ کر اندر داخل ہوئے اور اسے بیس بال کے بیٹ سے تشدد کا نشانہ بنایا اور گھسیٹا۔ اس نے بتایا کہ اس دوران میں کئی بار بے ہوش ہوئی۔ رات کے وقت وہ ایک بار پھر مجھے گھسیٹتے ہوئے قریبی قبرستان لے گئے اور وہاں مجھے ایک قبر کھودنے کو کہا۔ جب میں نے قبر کھود لی تو انہوں نے کہا کہ اس قبرمیں لیٹ جاﺅ۔ میں اوندھے منہ قبر میں لیٹ گئی اور انہوں نے اوپر مٹی ڈالنی شروع کر دی۔

نینا کا کہنا تھا کہ ملزمان کے جانے کے بعد اس نے اندر سے اپنی قبر کی مٹی اکھاڑنی شروع کی اور بالاخر باہر نکلنے میں کامیاب ہو گئی۔ ملزمان کے تشدد سے نینا کے ایک جبڑے اور ناک کی ہڈی سمیت کئی ہڈیاں ٹوٹی ہوئی تھیں۔ اس کے باوجود اس نے ہمت نہیں ہاری اور قبر کھود کر باہر نکل آئی۔

نینا کا مزید کہنا تھا کہ میں نے اپنے منہ کے گرد دونوں ہاتھوں سے خلاءبنا لیا تاکہ کچھ ہوا اندر محفوظ ہو سکے۔ وہ قہقہے لگا رہے تھے اور میرے اوپر مٹی ڈال رہے تھے۔ وہ کہہ رہے تھے کہ اب وہ میرے خاندان کے باقی لوگوں کو بھی اسی طرح قتل کر ڈالیں گے۔

پولیس نے دونوں ملزمان کو گرفتار کر لیا ہے اور دوران تفتیش دونوں ملزمان نے جرم کا اعتراف کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ شراب کے نشے میں تھے جس کی وجہ سے ان سے یہ جرم سرزد ہوا۔

متعلقہ خبریں

Leave a Comment