کورونا وائرس شاید کبھی ختم نہ ہو، عالمی ادارہ صحت کی انتباہ

 عالمگیر وباء کورونا وائرس کے حوالے سے عالمی ادارہ صحت نے آگاہ کیا ہے کہ شاید یہ وائرس کبھی ختم نہ ہو۔

ڈبلیو ایچ او نے متنبہ کیا ہے کہ وبائی مرض بڑے پیمانے پر پریشانی اور ذہنی امراض کا سبب بن رہا ہے۔ بالخصوص ان ممالک میں جہاں صحت کے شعبے میں زیادہ سرمایہ کاری نہیں کی گئی۔ ڈبلیو ایچ او کے ایمرجنسیز کے ڈائریکٹر مائیکل رائن نے کہا ہو سکتا ہے کہ وائرس ہماری کمیونٹی میں ایک پنڈیمک بن جائے اور کبھی ختم نہ ہو۔ انہوں نے کہا ویکسین کے بغیر لوگوں میں وائرس کے خلاف قوت مدافعت درکار سطح تک لانے میں کئی سال لگ سکتے ہیں۔

دنیا بھر میں کئی ماہرین ویکسین تیار کرنے کی کوشش کر رہے ہیں مگر ماہرین کا یہ بھی کہنا ہے کہ اسے بہت وقت چاہیے۔ مائیکل رائن نے کہا کہ کوئی نہیں بتا سکتا کہ کورونا وائرس کب ختم ہوگا۔ اس وقت کورونا وائرس کی 100 سے زائد ویکسینز آزمائی جا رہی ہیں۔ عالمی ادارہ صحت کے ڈائریکٹر جنرل نے کہا ہے کہ کورونا وائرس کا پھیلاؤ ہمارے اپنے اختیار میں ہے، ہمیں روزانہ احتیاط کرنی ہوگی تاکہ اس کے پھیلاؤ میں کمی آئے۔ حکام کا کہنا ہے کہ ہمیں ذہنی طورپرخود کو اس بات کیلئے تیار کرنا ہوگا کہ کورونا وائرس جلد ختم نہیں ہوگا۔

خیال رہے عالمی ادارہ صحت کی جانب سے یہ بیان ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب دنیا کے اکثرممالک لاک ڈاؤن میں نرمی کر رہے ہیں جب کہ ڈبلیو ایچ او نے خبردار بھی کیا تھا کہ کورونا وائرس کی دوسری لہر ختم ہونے سے قبل لاک ڈاؤن میں نرمی نہ کی جائے۔

متعلقہ خبریں

Leave a Comment