حکومت کے لیے مشکلات میں اضافہ، آئی ایم ایف کا نیا مطالبہ

اسلام آباد ۔ پی ٹی ائی حکومت کی مشکلات میں ہونے لگا اضافہ ہونے لگا۔آئی ایم ایف نے لینڈ ڈویلپرز اور بلڈرز کو دی گی ٹیکس ایمنسٹی پر اعتراض اٹھاتے ہوئے دسمبر 2020 میں ایمنسٹی ختم کرنے کا مطالبہ کر دیا ۔

 

ذرائع کے مطابق قرض پروگرام کے تحت پاکستان ٹیکس ایمنسٹی جاری نہیں کرسکتا اور کنسٹرکشن پیکج میں آمدن چھپانے پر بھی اظہارے اعتراض کرتے ہوئے دسمبر تک کنسٹرکشن انڈسٹری کو دی گئی چھوٹ ختم کرنے کا مطالبہ کر دیا ہے، کیونکہ پی ٹی ائی حکومت نے کرونا کے پیش نظر تعمیراتی شعبے کو ایمنسٹی دے رکھی ہے اور انکم ٹیکس آرڈیننس 2001ُُء میں ترمیم کرتے ہوئے فی مربع اور گز کی بنیاد پر فکسڈ ٹیکس کا نفاذ کیا گیا ہے اور سیمنٹ اور اسٹیل کے سوا تمام مٹیریل پر کوئی ود ہولڈنگ ٹیکس نہیں رکھا گیا اور اسی کے ساتھ بلڈرز اور ڈویلپرز کے لئے فکسڈ ٹیکس رجیم متعارف کرایا گیا ہے اور سیلز ٹیکس قوانین میں بھی ترمیم کی گئ ہے جس میں جائیدادوں کی نیلامی پر ایڈوانس ٹیکس 10 فیصد سے کم کر کے 5 فیصد کر دیا گیا ہے جبکہ بلڈرز اور لینڈ ڈویلپرز کو انکم ٹیکس ، کیپیٹل گین ٹیکس ، سروسز ٹیکس اور کیپٹل ویلیو ٹیکس کی چھوٹ حاصل ہے ۔

متعلقہ خبریں

Leave a Comment