اسلام آباد ہائی کورٹ نے وفاقی وزیر ہوابازی کیخلاف درخواست خارج کر دی

اسلام آباد ہائی کورٹ نے وفاقی وزیر غلام سرور خان کو عہدے سے ہٹانے اور پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کے خلاف درخواستیں ناقابل سماعت قرار دے کر خارج کر دیں، چیف جسٹس اطہرمن اللہ نے تحریری فیصلوں میں لکھا ہے کہ عدالت ایگزیکٹو کے اختیارات میں مداخلت نہیں کریگی، وفاقی وزیر کے خلاف کارروائی وزیراعظم کا اختیار ہے جبکہ پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں کا تعین خصوصی طور پر ایگزیکٹو کا اختیار ہے۔

 

وفاقی وزیر غلام سرور کو عہدے سے ہٹانے کی درخواست پر فیصلے میں عدالت نے قرار دیا کہ اگر وفاقی وزیر کے بیان سے ملک کو نقصان ہوا تو ایکشن لینا وزیراعظم کا اختیار ہے، وزیراعظم اور کابینہ ممبران بلاشبہ معاملے کی حساسیت اور اس کے ملک کے لئے سنجیدہ مضمرات سے آگاہ ہونگے، حالیہ صورتحال میں عدالت اپنے صوابدیدی اختیارات استعمال نہیں کریگی، درخواست خارج کی جاتی ہے۔

 

پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کے خلاف درخواست میں عدالت نے قرار دیا کہ قیمتیں طے کرنا خصوصی طور پر حکومت کا اختیار ہے، عدالت ایگزیکٹو کے اختیارات میں مداخلت نہیں کرے گی، تحریری فیصلے میں لکھا گیا ہے کہ عدالت کو اس بات پر کوئی شک نہیں کہ حکومت عوام کی مشکلات سے آگاہ ہے، ہمیں منتخب نمائندوں پر اعتماد کرنا چاہیے، کوئی بھی حکومت جان بوجھ کر عوام پر اضافی بوجھ ڈالنا نہیں چاہے گی، عدالت کی پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں کے معاملے میں مداخلت آئینی توازن میں بگاڑ پیدا کر سکتی ہے اس لئے عدالت مداخلت نہیں کریگی۔

 

چیف جسٹس اطہرمن اللہ نے تحریری فیصلے میں مزید لکھا کہ عدالتی مداخلت معاشی مشکلات کا سامنا کرتی حکومت کی پالیسیوں اور اقدامات پر اثرانداز ہو گی. احتشام کیانی ٹونٹی فور نیوز اسلام آباد

متعلقہ خبریں

Leave a Comment