اضافی دستوں کی تعیناتی اور اسکردو میں چینی فوج کی موجودگی کے بھارتی دعوے مسترد،

افواج پاکستان کے شعبہ تعلقات عامہ کے سربراہ میجر جنرل بابر افتخار نے لائن آف کنٹرول اور گلگت بلتستان پر اضافی دستوں کی تعیناتی اور چینی فوج کی اسکردو میں موجودگی کے بھارتی دعوے یکسر مسترد کردیئے ہیں، اور ان دعوئوں کو جھوٹا، غیر ذمہ دارانہ اور حقیقت کے خلاف قرار ہے۔

 

ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل بابر افتخار نے اپنے ٹویٹ میں کہا کہ بھارتی میڈیا میں ایل او سی پر پاک فوج کی اضافی نفری کے دعوے غلط ہیں، جبکہ اسکردو ایئر بیس چین کے استعمال کرنے کی رپورٹس بھی حقیقت کے برعکس ہے، اسی طرح پاک فوج کی جانب سے گلگت بلتستان میں اضافی دستے تعینات کرنے کے دعوے بھی غلط ہیں۔

ڈی جی آئی ایس پی آر کا کہنا ہے کہ بھارتی میڈیا کے یہ دعوے جھوٹے، غیر ذمہ دارانہ اور حقیقت کے خلاف ہیں، ایل او سی اور گلگت بلتستان میں کوئی نئی فوجی نقل و حرکت یا اضافی تعیناتی نہیں کی گئی، ڈی جی آئی ایس پی آر نے مزید کہا کہ پاکستان میں چینی فوج کی موجودگی کی سختی سے تردید کرتے ہیں۔

یاد رہے بھارتی میڈیا کا ھمیشہ سے پاکستان پر بے بنیاد اور من گھڑت الزام لگانا وطیرہ بن چکا ہے، گزشتہ سال مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج پر اڑی حملے میں برآمد اسلحے پر ’میڈ ان پاکستان‘ کی مہر لگی ہونے کی تمام بھارتی اخبارات اور ٹی وی چینلوں نےخبر دی تھی، بھارتی میڈیا نے یہ خبر ڈی جی ایم او لیفٹیننٹ جنرل رنبیر سنگھ کے حوالے سے دی تھی، جس کے بعدبھارتی میڈیا کا پاکستان پر بغیر ثبوت الزام لگانا اسے مہنگا پڑا تھا ۔

 

اڑی سیکٹر حملے کی رپورٹنگ پر بھارتی وزارت دفاع نے میڈیا کو حکم دیا تھا کہ کوئی بھی خبر شائع یا نشر کرنے سے پہلے وزارت دفاع سے تصدیق کرالی جائے ،بھارت کی ملکی اور بین الاقوامی سطح پر سبکی کے بعد خبریں سنسر کرانے کا فیصلہ کیا گیا تھا۔

متعلقہ خبریں

Leave a Comment