ن لیگ کا سابق چیئرمین ایف بی آر شبر زیدی پر چھ کمپنیوں کو غلط ریفنڈ دینے کا الزام

ن لیگ نے سابق چیئرمین ایف بی آر شبر زیدی پر چھ کمپنیوں کو غلط ریفنڈ دینے کا الزام لگا دیا، ن لیگ کی رکن قومی اسمبلی شیزا فاطمہ خواجہ نے سابق چیرمین سے متعلق سوال نامہ اسمبلی سیکریٹریٹ میں جمع کرادیا۔

اطلاعات کے مطابق ن لیگ کی رکن قومی اسمبلی شیزا فاطمہ خواجہ نے سابق چیرمین سے متعلق سوال نامہ اسمبلی سیکریٹریٹ میں جمع کرایا، جس میں انہوں نے سوال اٹھایا کہ گزشتہ مالی سال میں سولہ ارب کے انکم ٹیکس ریفنڈ دیئے گئے؟کیا اس طرح ایف بی آر کے سابق چیئرمین نے اپنے کلائنٹ کو فائدہ نہیں پہنچایا،

انہوں نے جمع کروائے گئے سوال نامے میں پوچھا کہ کیا اینگرو گروپ کو دو ارب،اسٹینڈرڈ چارٹر بنک کو ایک اعشاریہ پانچ ارب کا ریفنڈ دیا گیا؟ مالی سال 2019-20کے دوران ایچ بی ایل کو دس ارب،ایم سی بی کو ایک اعشاریہ پانچ ارب کے ریفنڈ ملے؟ دو سیمینٹ کمپنیوں ڈی جی خان کو پانچ سو ملین اور میپل لیف سیمنٹ کو سات سو ملین کا ریفنڈ دیا گیا؟؟ کیا ان چھ کمپنیوں کو ایسے موقع پر فائدہ نہیں پہنچایا گیا جب ادارہ خود ریونیو جمع کرنے میں مشکلات کا شکار رہا، اس معاملے کو فنانس کی سب کمیٹی میں بھی اٹھایا گیا تھا لیکن ایف بی آر نے وہاں بھی کوئی جواب نہ دیا،

ن لیگ نے مطالبہ کیا کہ وزارت خزانہ قومی اسمبلی میں اس پر معاملے پر جواب دے۔

متعلقہ خبریں

Leave a Comment