ٹک ٹاک کا جادو ، فحش ویڈیوز بے قابو

ویسے تو دنیا میں بہت بڑے اور نام نہاد انقلاب آئے ہیں لیکن اس ٹک ٹاک نے ایسے انقلاب کا نعرہ لگایا کہ سب کو اس نعرے کی لپیٹ میں لے لیا ۔ آج پوری دنیا میں ٹک ٹاک ایپ کو استعمال کرنے والوں کی تعداد 5 سو ملین ہے اور یہ تعداد دن بدن بڑھتی جا رہی ہے، جبکہ پاکستان میں فیس بک کے بعد سب سے زیادہ استعمال کی جانے والی ایپ ٹک ٹاک ہے جس پر چند سیکنڈز کی ویڈیوز بنا کر بہت سے لوگ شہرت کی بلندیوں کو چھوتے نظر آتے ہیں لیکن گزشتہ کئی ماہ سےان شہرت یافتہ ٹک ٹاک سٹارز کے ویڈیو سکینڈلز منظرِ عام پر آرہے ہیں، جس میں ان کی پرسنل (نیکیڈ ) فحاش ویڈیوز شامل ہیں ۔ جن پر ٹک ٹاک سٹاز کے پرستار مایوسی کا اظہار کرتے نظر آتے ہیں اور ساتھ ہی ساتھ کچھ فحاش پرست وحشی درندے ایسے بھی ہیں جو اِن ویڈیوز کو مختلف سوشل میڈیا پر وائرل کر رہے ہیں ۔ میں یہاں متاثرہ فریق کا نام لینے سے گریز کروں گا لیکن جب میں نے اُن سے پوچھا کی یہ ویڈیوز کیوں بنائی گئی اور کیسے وائرل ہوئی تو انھوں نے شرمندگی سے اعتراف کرتے ہوئے کہا کہ یہ ویڈیوز محبت کی آڑ میں بنائی گئی تھیں اور کچھ دن پہلے میرے بوائے فرینڈ سے میرے تعلقات خراب ہونے کے بعد یہ وائرل ہو گئیں۔ جبکہ متاثرہ فریق 2 سے جب یہی سوال پوچھے گئے تو انھوں نے بہت حیران کن جواب دیتے ہوئے کہا کہ میں اپنے فیگر کو لے کر بہت سنجیدہ تھی جس پر میں نے جمِ جانا شروع کر دیا تھا اور جم جانے سے پہلے کچھ تصاویر لی تھیں تا کہ میں 2 ماہ بعد نتائج کا تعین کر سکوں لیکن ان دو ماہ کے دوران میرا فون چوری ہوگیا جس کے بعد میری تمام تصاویر وائرل ہوگئیں اور اس کا اثر صرف مجھ پر نہیں بلکہ مجھ سے منسلک ہر فرد پر ہوا ہے ۔ان سب سے ایک نتیجہ یہ اخذ ہوتا ہے کہ زندگی میں شہرت پانا تو آسان ہے لیکن اس شہرت کو سنبھالنا مشکل ہے اور بے شک وہ خدا جیسے چاہے عزت دے اور جیسے چاہے ذلت سے دو چار کرے ۔ میں امید کرتا ہوں کہ عقل رکھنے والے ہر شخص کے لئے میری یہ تحریر نصیحت کی حامل ہو گی ۔

متعلقہ خبریں

Leave a Comment