راولپنڈی میں ماں پر تشدد کے کیس میں ایک نیا موڑ

راولپنڈی میں ماں پر تشدد کے کیس میں ایک نیا موڑ آ گیا۔

تفصیلات کے مطابق تشدد کا نشانہ بننے والی خاتون کے شوہر غزالی میر نے پولیس کو بیان دیا ہے کہ ان کی اہلیہ زیادتی کر دیتی ہیں، انہوں نے بیٹے کی گاڑی کو وائپر سے توڑا ، اور بیٹے سے غلط باتیں کیں جس کے بعد بیٹے نے طیش میں آ کر یہ اقدام اٹھایا، اہلیہ نے زیادتی کی اس لیے نوبت یہاں تک پہنچی،

 

غزالی میر نے میڈیا کو بتایا کہ جب یہ واقعہ ہوا میں گھر میں موجود نہیں تھا، میرا بیٹا سانس کی بیماری میں مبتلا ہے مجھے میری بیٹی نے بذریعہ فون اطلاع دی تو میں گھر پہنچا اور دیکھا کہ گلی میں لوگ اکٹھے ہیں جبکہ گھر میں میرا بیٹا ارسلان فرش پر لیٹا ہوا تھا اور میری اہلیہ بھی زمین پر لیٹی ہوئی تھیں۔

 

غزالی میر کا کہنا تھا کہ میرے بیٹے نے مجھ سے شکوہ کرتے ہوئے کہا کہ یہ دیکھ لیں ماں نے گاڑی کے شیشے توڑ دیے اور گاڑی کو کافی نقصان پہنچایا ہے، میرے نمبر پر جب پولیس نے فون کیا تو میری اہلیہ گلناز نے مجھے پولیس والوں سے بات نہیں کرنے دی اور مجھ سے فون چھین کر پولیس اہلکار کے ساتھ بھی نازیبا الفاظ استعمال کیے۔

 

غزالی میر کا مزید کہنا تھا کہ گلناز کی ان کے ساتھ دوسری شادی تھی اور پہلے شوہر سے ان کے چار بچے تھے جن میں سے 2 لڑکیاں شادی شدہ، ایک بیٹا انگلینڈ میں مقیم اور اور دوسرا ارسلان ہے اور وہ بھی شادی شدہ اور ایک بیٹی کا باپ ہے جبکہ میری پہلی اہلیہ سے ایک ہی بیٹی ہے جو ساتھ رہتی ہے۔

غزالی میر کا کہنا ہے کہ ان کی اہلیہ بھی زیادتی کرتی ہیں جس کی وجہ سے نوبت یہاں تک آگئی اور معاملہ پولیس تک پہنچ گیا۔

 

دوسری جانب تشدد کرنے والے شخص ارسلان کی اہلیہ بسمہ کا کہنا ہے کہ ویڈیو کا صرف ایک حصہ عوام کے سامنے لایا گیا اس سے پہلے میرے خاوند کے ساتھ ان کی والدہ نے جو کیا وہ میں آپ کو بیان نہیں کر سکتی، میری شادی کو 4 سال ہو گئے ہیں اور ڈیڑھ پونے دو سال کی بیٹی ہے 4 سال سے میری ساس مجھ پر ظلم کے پہاڑ توڑ رہی ہیں لیکن گھر بچانے کے لیے میں نے کبھی لب کشائی نہیں کی اب جب بات میڈیا تک پہنچی ہے تو مجبوراً تصویر کا دوسرا رخ بتانے کے لیے لب کشائی کر رہی ہوں۔

 

بسمہ نے الزام لگایا کہ میری ساس اور ان کی بیٹی نے میری معصوم بچی کا دودھ تک چھپا دیا تھا، ہر روز مجھ پر ظلم کیا جاتا تھا، اگر بیٹے نے ماں پر ہاتھ اٹھایا ہے تو ضرور اس کی کوئی وجہ ہو گی۔

 

بسمہ کا مزید کہنا تھا کہ میرے خاوند کی بہن رات گئے پولیس کے پاس گئی اور ان کو ساتھ لے کر آئی لیکن اصل بات اس نے پولیس کو نہیں بتائی میری ساس نے پہلے زیادتی کی اس لیے معاملہ اتنا آگے بڑھا۔

 

خیال رہے کہ یہ افسوسناک واقع گزشتہ روز راولپنڈی تھانہ صادق آباد میں پیش آیا تھا، افسوس ناک واقعہ میں بیٹے نے ماں پر شدید تشدد کیا ہے جس کی ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہو چکی ہے۔

متعلقہ خبریں

Leave a Comment