چین پاکستان میں خفیہ آپریشن چلا رہا ہے، آسٹریلوی اخبار کا دعویٰ

آسٹریلوی اخبار "کلیکزون ” نے دعویٰ کیا ہے کہ چین کی ووہان لیب پاکستان میں خفیہ آپریشن چلارہی ہے۔

آسٹریلوی اخبارکلیکزون نے دعویٰ کیا ہے کہ چین کی ووہان لیب پاکستان میں "خفیہ آپریشن” چلارہی ہے ، جس سے "اینٹراکس جیسی بیماری پیدا ہوئی ہے، جو کہ حیاتیاتی جنگ میں استعمال ہوتا ہے، انٹیلیجنس ماہرین کے مطابق ، چین کی ووہان لیب نے بھارت اور مغربی حریفوں کے خلاف وسیع پیمانے پر پاکستان میں کاروائیاں شروع کر دی ہیں۔

آسٹریلوی اخبار میں چھپنے والے مضمون کے لکھاری انتھونی نے کہ میرے متعدد انٹیلیجنس ذرائع کے مطابق ، پاکستان اور چین نے حیاتیاتی جنگ کی ممکنہ صلاحیتوں کو بڑھانے کے لئے  تین سالہ ایک خفیہ معاہدہ کیا ہے ، جس میں مہلک ایجنٹ انتھراکس سے متعلق متعدد تحقیقی منصوبے سمیت شامل ہیں۔

آسٹریلوی صحافی انتھونی نے الزام لگایا کہ چینی سرزمین پر کورونا وائرس پھیلنے کے تناظر میں ، چین کی ووہان انسٹی ٹیوٹ آف ویرولوجی نے ابھرتی ہوئی متعدی بیماریوں میں تحقیق میں تعاون کرنے اور حیاتیاتی امور پر پیشگی مطالعات کے لئے پاک فوج کی دفاعی سائنس اور ٹیکنالوجی تنظیم (ڈی ای ایس ٹی او) کے ساتھ خفیہ معاہدے پر دستخط کیے ہیں۔

انتھونی نے مزید لکھا کہ میرے انتہائی قابل اعتماد انٹیلیجنس ذرائع کے مطابق ، اس پروگرام کو مکمل طور پر چین مالی معاونت فراہم کرنے جا رہا ہے اور اس کا باضابطہ طور پر عنوان "ابھرتی ہوئی متعدی بیماریوں اور ویکٹرک ٹرانسمیٹنگ امراض کے حیاتیاتی کنٹرول سے متعلق مطالعات کے لئے تعاون” ہے، ذرائع نے بتایا کہ چین کے ووہان انسٹی ٹیوٹ آف وائرولوجی نے "اس منصوبے کے لئے تمام مالی ، مادی اور سائنسی مددفراہم کی ہے۔

اخبار کا مزید کہنا تھا کہ حیاتیاتی ہتھیار روایتی طور پر ناقابل تسخیر رہے ہیں کیونکہ وہ آسانی سے پھیلتے ہیں، اور بڑے پیمانے پر تباہی پھیلاتے ہیں، حالیہ برسوں میں حیاتیاتی جنگ کا خطرہ کافی حد تک بڑھ گیا ہے ، اور ماہرین نے خبردار کیا ہے کہ چین ڈی این اے کی تحقیق میں بہت زیادہ ملوث ہے، اگرچہ ووہان انسٹی ٹیوٹ آف ویروولوجی سے نکلنے والے کورونا وائرس کے نظریات کو ماہرین نے بڑے پیمانے پر مسترد کردیا ہے ، لیکن عام طور پر ووہان لیب میں حفاظتی معیارات کے بارے میں شدید تشویش پائی جاتی ہے۔

دوسری طرف پاکستان کی ترجمان دفتر خارجہ نے چینی ووہان لیب کی پاکستان میں خفیہ کارروائیوں کے بارے میں کلیکسن کی رپورٹ پر ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ گمنام ذرائع کی رپورٹ جعل سازی پر مشتمل ہے، پاکستان کی بائیو سیفٹی لیول 3 لیبارٹری کے حوالے سے کوئی راز نہیں ہے، پاکستان حیاتیاتی اور زہریلے ہتھیاروں کے کنونشن (بی ٹی ڈبلیو سی) کے بارے میں معلومات دے رہا ہے۔

متعلقہ خبریں

Leave a Comment