گلگت میں پولیس پر فائرنگ، 5 اہلکار شہید

گلگت بلتستان کے ضلع دیامر میں ایک گھر پر چھاپے کے دوران انسدادِ دہشت گردی کی ٹیم پر فائرنگ سے 5 پولیس اہلکار شہید جبکہ 5 زخمی ہو گئے۔

ضلع دیامر پولیس کے ترجمان مبارک جان نےصحافیوں کو بتایا کہ پولیس کے محکمہ انسدادِ دہشت گردی (سی ٹی ڈی) کو ذرائع سے اطلاع ملی کہ جوگلوٹ تھانے کو مختلف مقدمات میں پولیس کو مطلوب کچھ اشتہاری ملزمان ایک مکان میں موجود ہیں، جس کے بعد سی ٹی ڈی کی ٹیم نے چلاس کے علاقے رونئی میں مذکورہ گھر پر پیر اور منگل کی درمیانی شب چھاپہ مارا، جس کے نتیجے میں اشتہاری ملزمان اور سی ٹی ڈی ٹیم کے درمیان فائرنگ کا تبادلہ ہوا اور 5 پولیس اہلکار شہید جبکہ 5 زخمی ہو گئے۔

پولیس ذرائع کے مطابق انہیں اشتہاری مجرم علاج اعظم ولد جلو ساکن نیاٹ رونئی کے اس مکان میں موجود ہونے کی اطلاع تھی، سی ٹی ڈی کی چھاپہ مار ٹیم کے انچارج انسپکٹر نبی ولی کی سرکردگی میں اس مکان میں آپریشن کیا گیا اس دوران کراس فائرنگ کے نتیجے میں ہلاکتیں ہوئیں۔

پولیس کے مطابق متعلق جگہ کا کرائم سین محفوظ کر لیا گیا ہے اور دیگر شواہد اکٹھے کیے جا رہے ہیں، پولیس نے علاقے کی ناکہ بندی کر لی ہے اور ملحقہ آبادیوں اور مشکوک جگہوں پر چھاپے مارے جا رہے ہیں، پولیس کو اس آپریشن کے دوران خفیہ اداروں کا تعاون بھی حاصل ہے۔

ہلاک ہونے والوں میں SIPسہراب خان ساکن استور، FCضیاء ساکن دیامر، FCجنید کریم ساکن ہنزہ، FCغلام مرتضٰی ساکن استور اور FCاشتیاق احمدساکن استور شامل ہیں جبکہ زخمی ہونے والے پولیس اہلکاروں میں IPنبی ولی خان ساکن گلگت، FCمحمد علی ساکن نگر، FCہدایت کریم ساکن ہنزہ،FCشان محمد ساکن گلگت اور شکر علی شامل ہیں

پولیس کا کہنا ہے کہ واقعے کی تفتیش کر رہی ہے اور مذید حقائق منظر عام پر لائے جائیں گے، پولیس نے علاقے کی ناکہ بندی کر کے ملحقہ علاقوں اور مشکوک جگہوں پر چھاپے مارنے شروع کر دیے ہیں۔

متعلقہ خبریں

Leave a Comment