چیئرمین سینیٹ کا 5 اگست2020 کے حوالے سے پیغام

اسلام آباد : چیئرمین سینیٹ محمدصادق نے کہا کہ 5 اگست انسانی تاریخ کا ایک تاریک دن ہے جب مقبوضہ کشمیر میں مودی سرکار نے انسانی حقوق کی پامالی کی ایک نئی مثال قائم کی اور مقبوضہ وادی میں لاک ڈاؤن کا نفاذ کر کے پوری وادی کو جیل میں تبدیل کر دیا۔انسانی تاریخ میں ایسی بدترین مثال کہیں نہیں ملتی۔یہ طویل ترین لاک ڈاؤن جس میں بھارتی مقبوضہ افواج نے درندگی کی انتہا کرتے ہوئے بچوں، بوڑھوں، خواتین اور معصوم نہتے کشمیریوں کو ظلم و جبر کا نشانہ بنایا جس پر عالمی اداروں نے بھی سوالات اٹھائے اور بھارت عالمی سطح پر تنہا ہو گیا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ اس تمام تر صورتحال کے پیش نظر بھارتی حکومت کے اقدامات سے خطے کے امن کے توازن کو شدید دھچکا لگا اور علاقائی ترقی و خوشحالی کی راہ میں رکاوٹیں کھڑی کرنے کی کوشش کی گئی۔پاکستان مسئلہ کشمیر کا پر امن حل چاہتا ہے اور امن کی اہمیت کو سمجھتا ہے۔تمام تر مسائل کا حل ڈائیلاگ ہے اور جنگ کسی بھی مسئلے کا حل نہیں۔

انکا مزید کہنا تھا کہ عالمی تاریخ اس بات کی گواہ ہے کہ بین الریاستی مسائل ہمیشہ مذاکرات کی میز پر ہی حل ہوئے ہیں اور پائیدار امن اسی طریقے سے ہی حاصل کیا جا سکتا ہے تاہم اس کے برعکس بھارت نے اوچھے ہتھکنڈے اختیار کیے اور ہمیشہ خطے کے تھانیدار بننے کی کوشش کی جس میں وہ بری طرح ناکام رہا۔

چئرمین سینیٹ نے کہا کہ آج 5 اگست 2020 ہے اور مقبوضہ وادی میں نافذ کیے گئے لاک ڈاؤن کو ایک سال پورا ہوگیا ہے اور اس ایک سال کی تاریخ بے گناہ اور نہتے کشمیریوں کے خون سے بھری پڑی ہے۔عالمی برادری پر اب یہ لازمی ہوگیا ہے کہ وہ اپنا کردار ادا کرتے ہوئے بھارت پر دباؤ ڈالے اور مقبوضہ کشمیر کے عوام کی خواہشات اور اقوام متحدہ کی قرار دادوں کے مطابق اس دیرینہ مسئلے کو حل کرائے۔

متعلقہ خبریں

Leave a Comment