پنجاب پولیس نے ایک بار پھر ظلم کے پہاڑ توڑ دئیے، حاملہ عورت پر بہیمانہ تشدد

آج کے دن جب پورے پاکستان میں یوم استحصال منایا جا رہا ہے، پنجاب پولیس کی غنڈا گردی کا ایک واقعہ منظر عام پر آ گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق حویلی لکھا میونسپل سٹیڈیم میں وزیر اعظم پاکستان کے احساس کفالت پروگرام میں پنجاب پولیس کے جوانوں نے نہتے پاکستانی خواتین و حضرات پر گھونسوں، مکوں اور ڈنڈوں سے کشمیر میں ہونے والے مظالم کی یاد تازہ کر دی۔

پنجاب کے شہر حویلی لکھا میں میونسپل سٹیڈیم میں وزیراعظم عمران خان کے احساس کفالت پروگرام کے تحت امداد لینے کے لیے آنے والے مستحق نوجوان کا کہنا تھا کہ میری بیوی کو کفالت پروگرام کا طرف سے میسج آیا تھا۔ اس وقت میری بیوی حاملہ ہے، اس لیے میں اسے ساتھ لے کر پیسے لینے آگیا رش زیادہ ہونے کی وجہ سے میں ساتھ تھا جبکہ پولیس نے بغیر پوچھے مجھے مارنا شروع کر دیا۔ سامنے آنے والی ویڈیو میں حاملہ عورت کو دیکھا جا سکتا ہے کہ وہ ہاتھ جوڑ کر رحم کی بھیک مانگ رہی ہے۔

دوسری جانب پولیس کا یہ موقف ہے کہ یہ نوجوان اپنی حاملہ بیوی کو لائن کے بغیر پیسے دلوانے کی کوشش کر رہا تھا تو باقی خواتین کے کہنے پر اسے سمجھایا مگر نہ ماننے پر تشدد کیا۔ احساس کفالت پروگرام میں لوگوں نے پولیس کے اس رویے کے خلاف احتجاج کیا اور نعرہ بازی کی۔

متعلقہ خبریں

Leave a Comment