پنجاب اسمبلی تحفظ بنیاد اسلام بل، اسمبلی اراکین کا بل واپس لینے کا مطالبہ

پنجاب اسمبلی،تحفظ بنیاد اسلام بل کا معاملہ، حکومتی اور اپوزیشن ارکان نے بل کو واپس لینے کا مطالبہ کردیا۔

تفصیلات کے مطابق حکومتی اور اپوزیشن ارکان نے پنجاب اسمبلی،تحفظ بنیاد اسلام بل کو واپس لینے کا مطالبہ کردیا، حکومتی ارکان نے تحفظ بنیاد اسلام بل کو حکومت کے خلاف سازش قرار دے دیا، بل کو شہزاد اکبر کے کہنے پر اسمبلی سے منظور کرایا گیا۔

ن لیگ کے پیر اشرف رسول کا ایوان میں انکشاف
تحفظ بنیاد اسکام بل کی حمایت پر تحریک انصاف کے رکن سید یاور عباس بخاری نے ایوان سے معافی مانگ لی

سید یاور عباس بخاری نے کہا کہ ہمیں اندھیرے میں رکھ کر بل کو منظور کرایا گیا، اس بل سے پاکستان میں فرقہ وارانہ کشیدگی پیدا ہوگی، اسمبلی کسی شخص کو یہ نہیں کہہ سکتی کہ اس کا فرقہ کیا ہوگا۔

ارکان اسمبلی نے کہا کہ بل کو واپس اسمبلی میں لاکر اس پر تمام مکتبہ فکر کے افراد پر کمیٹی بنائے جائے، بل کو واپس اسمبلی میں لایا جائے اس بل کو کسی صورت قبول نہیں کریں گے، بتایا جائے کہ کیا یہ بل حکومت کا ہے۔اگر حکومت کا ہے تو کابینہ کی منظوری سامنے لائی جائے، اگر یہ بل پرائیویٹ طور پر منظور کرایا گیا ہے تو کس کمیٹی سے منظور ہوا ہے وہ بتایا جائے۔

پیپلزپارٹی کے پارلیمانی لیڈر سید حسن مرتضی نے بل سے لاتعلقی کا اعلان کر دیا، انہوں نے کہا کہ کہا گیا کہ میرا نام بھی اس کمیٹی میں تھا حالانکہ مجھے معلوم ہی نہیں، مجھے کسی قسم کی کوئی اطلاع نہیں دی گئی،۔

حکومتی ارکان نے مزید کہا کہ اس بل پر ہمیں اندھیرے میں رکھ کر منظور کرایا گیا، آئندہ ہر بل کو آنکھیں بند کرکے منظور نہیں کریں گے۔

متعلقہ خبریں

Leave a Comment