چڑیا گھر کے جانوروں کی ہلاکت،امین اسلم اور زرتاج گل کو شو کاز نوٹس جاری

اسلام آباد کے چڑیا گھر میں جانوروں کی ہلاکت کے کیس میں وزیر مملکت موسمیاتی تبدیلی زرتاج گل، مشیر ملک امین اسلم، سیکرٹری موسمیاتی تبدیلی ناہید درانی اور وائلڈ لائف مینجمنٹ بورڈ کے ممبران کو توہین عدالت نے شوکاز نوٹسز جاری کر دئیے ،

تفصیلات کے مطابق اسلام آباد کے چڑیا گھر میں جانوروں کی ہلاکت کے کیس کی سماعت چیف جسٹس اطہر من اللہ نے کی، ڈپٹی اٹارنی جنرل نے موقف اپنایا کہ سیکرٹری خود معاملے کی انکوائری کر رہی ہیں، جس پر چیف جسٹس نے کہا کہ سیکرٹری کیسے اپنے خلاف انکوائری کرے گی، یہ صرف جانوروں کا قتل نہیں ہے، یہ کیس ایک مثال ہوگا، جانوروں پر انسانوں کے ظلم کی داستان ہے یہ، جب باہر سے تعریف آنا شروع ہوجائے تو سب چڑیا گھر جاتے ہیں اور پریس کانفرس کر رہے ہوتے ہیں، زمہ داری کی آتی ہے تو کوئی بھی تیار نہیں ہوتا۔

چیف جسٹس نے سیکرٹری موسمیاتی تبدیلی سے کہا کہ کیا آپ کو پتہ ہے کہ لوگوں نے گھروں میں یہ پالتو جانور رکھے ہیں، جانوروں کو قتل کرنا نہیں بلکہ انکو تحفظ فراہم کرنا ہے،لوگوں نے گھروں میں شیر تک رکھے ہیں، یہ جانور شو کرنے کے لیے نہیں ہے، 40 زرافہ چڑیا گھر درآمد کیے گئے اور سارے مر گئے۔

سیکرٹری ماحولیاتی تبدیلی نے بتایا کہ عدالتی احکامات کے تناظر میں ہماری انکوائری جاری ہے، پچھلے ایک سال میں 50 فیصد جانور چڑیا گھر میں موجود نہیں۔

چیف جسٹس نے کہا کہ شروع سے ہی یہ عدالت دیکھ رہی کہ یہاں پر سیاست بہت ہے، آپ ضرور انکوائری کریں، مگر عدالتی احکامات کی خلاف ورزی کی گئی،کیا آپ چاہتی ہیں کہ یہ عدالت وزیراعظم کو شوکاز نوٹس جاری کرے۔

ڈپٹی اٹارنی جنرل طیب شاہ نے شوکاز نوٹس جاری نہ کرنے کی استدعا کی تو سیکرٹری موسمیاتی تبدیلی نے واقعے کی تمام ذمہ داری قبول کرتے ہوئے کہا کہ کابینہ ارکان کا کوئی تعلق نہیں، عدالت نے استدعا مسترد کرتے ہوئے وزیر مملکت موسمیاتی تبدیلی زرتاج گل، مشیر ملک امین اسلم، سیکرٹری موسمیاتی تبدیلی ناہید درانی اور وائلڈلائف مینجمنٹ بورڈ کے ممبران کو توہین عدالت کے شوکاز نوٹسز جاری کر دیئے، کیس کی سماعت 27 اگست تک ملتوی کر گئی۔

متعلقہ خبریں

Leave a Comment