سپریم کورٹ:نیپرا کو عوامی سماعت کرکے فیصلے کااختیار دے دیا گیا

سپریم کورٹ نے نیپراقانون کے سیکشن 26 کے تحت نیپرا کو عوامی سماعت کرکے فیصلے کااختیاردے دیا ہے۔

سپریم کورٹ میں سندھ خصوصا کراچی میں غیر اعلامیہ لوڈ شیڈنگ سے متعلق چیف جسٹس پاکستان کی سربراہی میں دو رکنی بنچ نے کیس کی سماعت کی۔ عدالت نے کراچی میں غیراعلانیہ لوڈشیڈنگ اورکے الیکٹرک کی کارکردگی پر برہمی کا اظہار کرتےہوئے نیپراقانون کے سیکشن 26 پر عملدرآمدکا حکم دیے دیا۔

عدالت نے کہاکہ قانون کے تحت نیپرا کو عوامی سماعت کرکے فیصلے کااختیار ہے۔ نیپراقانون کے مطابق کے الیکٹرک کے کراچی میں بجلی سپلائی کے خصوصی اختیار کافیصلہ کرے۔

عدالت نے حکم دیا کہ 10 روز میں نیپراٹریبونل کے ممبرز تعینات کیا جائے۔ عدالت نے کے الیکٹرک کیخلاف نیپرا اقدامات پر جاری شدہ حکم امتناع بھی خارج کرتے ہوئے نیپراسے کارروائی پر مبنی رپورٹ بھی طلب کرلی۔

دوران سماعت چیف جسٹس پاکستان نےریمارکس دیے کہ ہم نے موجودہ صورتحال پر رپورٹ مانگی تھی انہوں نے مستقبل کا لکھ دیا۔ مسقبل کو چھوڑ دیں، اب کیا کررہے ہیں اس کا بتایا جائے۔

چیف جسٹس نے کہا کہ اور ڈویژن والوں کو کراچی لے جائیں دیکھیں لوگ کیسے ان کو پتھر مارتے ہیں۔ حکومت پاکستان کے الیکٹرک کی کلرک اور منشی بنی ہوئی ہے۔ کراچی جاکر ان لوگوں کا دماغ ٹھیک ہو جائے گا۔

جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیے کہ کراچی میں بارشوں کی وجہ سے صورتحال مزید خراب ہو چکی ہے۔ ہم نے کہا تھا کہ نیپرا اور دیگر ادارے کراچی میں لوڈ شیڈنگ کے مسئلے کا حل نکال کر آئیں۔

چیف جسٹس نے کہاکہ کراچی کی لوکل گورنمنٹ چار سال تک رہی ایک نالی تک نہیں بنائی۔ لوکل گورنمنٹ والوں کو جتنے بھی پیسے ملے وہ تنخواہوں پر خرچ کئے گئے ہیں۔ کراچی میں کے ایم سی اور کنٹونمنٹ بورڈ ہے لیکن ان کے ملازم نظر نہیں آرہے۔ لگتا ہے سارے گھوسٹ ملازمین بھرتی ہوئے ہیں۔

چیف جسٹس پاکستان نے کہاکہ اگر کے الیکٹرک پر وفاق کی رٹ نہیں تو مطلب ہے کہ پورے ملک میں حکومت کی رٹ نہیں۔ حکومت میں ملک چلانے کی نہ صلاحیت ہے نہ ہی قابلیت۔ جس پاور ڈویژن والے افسر نے رپورٹ جمع کرائی اس کو پھانسی دے دینی چاہئیے۔

چیف جسٹس نے مزید ریمارکس دیے کہ اداروں کی آپس میں کوئی ہم آہنگی نہیں۔ اس بار بلی تھیلے سے باہر آگئی ہے۔ وفاقی حکومت کے الیکٹرک کو سبسڈی دے رہی ہے۔ آج بھی آدھا کراچی پانی اور اندھیرے میں ڈوبا ہوا ہے۔

چیف جسٹس نے کہاکہ حکومت کو بے بس کیا جارہا ہے کیونکہ اس کے پاس اہلیت نہیں۔ ملک میں پیٹرول کا بڑا سکینڈل آیا ۔ ملکی معیشت تباہی کے دہانے پر آگئی حکومتی معاملات سمجھ سے باہر ہیں۔

متعلقہ خبریں

Leave a Comment