کاون ہاتھی اور ریچھوں کو جلد از جلد بیرون ملک منتقل کیا جائے، اسلام آباد ہائی کورٹ

اسلام آباد ہائیکورٹ نے حکم دیا ہے کہ کاون ہاتھی اور ریچھوں کی بیرون ملک منتقلی کیلئے تمام ضروری اقدامات جلد از جلد مکمل کئے جائیں۔

چیف جسٹس اطہر من اللہ نے چڑیا گھر کے جانوروں کی منتقلی کیس کا تحریری حکم نامہ جاری کر دیا۔

اسلام آباد ہائیکورٹ نے تحریری حکم نامہ میں کہا کہ پاکستان میں ہمالین براؤن بیئرز کو منتقل کرنے کے لئے کوئی محفوظ پناہ گاہ موجود نہیں۔ حکومت پنجاب بھی ریچھوں کی ذمہ داری لینے کو تیار نہیں۔ انسانوں کے سامنے نمائش میں چڑیا گھر کے جانور بے پناہ تکلیف برداشت کر چکے ہیں۔

اسلام آباد ہائیکورٹ نے کہا کہ عدالت پہلے ہی قرار دے چکی کہ جانوروں کو غیرضروری تکلیف دینا خلاف قانون ہے۔ جانداروں کو انکے قدرتی مسکن سے نکالنا خلاف قانون اور حق زندگی سلب کرنے کے مترادف ہے۔

چیئرمین وائلڈ لائف بورڈ نے عدالت کو بتایا کہ کاون ہاتھی کو کمبوڈیا منتقل کرنے کے انتظامات جلد مکمل کر لئے جائیں گے۔ ڈپٹی ڈائریکٹر سید علی رضا کے مطابق تین ہفتوں میں جانوروں کی منتقلی کے این او سیز جاری کر دیے جائیں گے۔

اسلام آباد ہائیکورٹ نے کہا کہ ماضی میں جانوروں کو مسلسل نظرانداز کیا جانا افسوس ناک ہے، جانوروں کو نظرانداز کیا جانا انکے لئے غیرضروری تکلیف کا باعث بنتا رہا۔

یاد رہے اسلام آباد ہائی کورٹ نے کاون اور  ریچھوں کی رہائی اور اسے ایک بہترین قدرتی مسکن میں منتقل کرنے کا حکم دیا تھا۔

 

متعلقہ خبریں

Leave a Comment