آرمینیا اور آذربائیجان نے جنگ بندی پر اتفاق کر لیا، روس

روسی وزیر خارجہ کے مطابق آرمینیا اور آذربائیجان گزشتہ شب جنگ بندی پر اتفاق کر لیا۔ 

ماسکو میں دونوں فریقین کے مابین 10 گھنٹوں کی طویل بات چیت کے بعد یہ پیشرفت سامنے آئی ہے۔

روسی وزیر خارجہ سیرگی لاوروف نے کہا ہے کہ آرمینیا اور آذربائیجان نے 10 اکتوبر کی شب 10 گھنٹوں کے طویل مذاکرات کے بعد جنگ بندی پر اتفاق کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ دونوں ممالک نے متنازعہ علاقے ناگورنو کاراباخ کے بارے میں ٹھوس بات چیت شروع کرنے کا ارادہ کیا ہے۔

یہ پیشرفت ہفتہ کی صبح کے اوائل میں ماسکو میں 10 گھنٹے کی بات چیت کے بعد سامنے آئی۔

روس کے اعلی سفارتکار نے کہا کہ ریڈ کراس انسانی بنیادوں ثالثی کا کردار ادا کرے گا۔

27 ستمبر کو شروع ہونے ہونے والی اس لڑائی میں کم از کم 300 افراد اپنی جان گنوا چکے ہیں۔

لاوروف نے ان مذاکرات کے بارے میں تفصیلات فراہم نہیں کیں۔

آرمینیا کے وزیر خارجہ زوہرب منتسکانیان اور ان کے آذری ہم منصب جیہون بایراموف نے صحافیوں سے بات نہیں کی۔

خیال رہے کہ ناگورنو کاراباخ سوویت یونین کا ایک خود مختار علاقہ تھا۔ لیکن اسی کی دہائی میں سوویت یونین کے خاتمے کے بعد آرمینیا سے تعلق رکھنے والے علیحدگی پسندوں نے 1990 کی دہائی میں خونی جنگ کے بعد ناگورنو کاراباخ کے علاقے پر قبضہ کیا تھا۔

آرمینی اکثریت والے اس علاقے نے 1988 میں آزادی کا اعلان کر دیا تھا جس کے نتیجے میں آرمینیا اور آذربائیجان کے درمیان جنگ چھڑ گئی، جو چھ سال جاری رہی۔

یہ جنگ 1994 میں ختم ہوئی اور اس کے بعد بین الاقوامی برادری کی امن قائم کرنے کی بارہا کوششیں ناکام رہی ہیں۔

نویں کے عشرے سے جاری اس تنازع میں اب تک تیس ہزار لوگ مارے جا چکے ہیں۔ تجزیہ کار دونوں ملکوں کے درمیان جاری جنگ کو گزشتہ دو دہائیوں کی سب سے زہادہ شدید لڑائی قرار دے رہے ہیں 

متعلقہ خبریں

Leave a Comment