کورونا کی دوسری لہر،پنجاب بھر کے تمام دفاتر میں نصف عملہ بلانے کاحکم

کرونا وائرس کے بڑھتے کیسز کے پیش نظر پنجاب حکومت نے تمام سرکاری اور نجی دفاتر میں عملہ فوری طور پر 50 فیصد تک محدود کرنے کا حکم دیدیا، 31 جنوری تک باقی عملہ گھروں سے کام کرے گا۔

دنیا بھر کی طرح پاکستان میں بھی کرونا وائرس کی دوسری لہر شدت اختیار کرتی جارہی ہے۔ این سی او سی نے ملک بھر میں 26 نومبر سے تمام تعلیمی ادارے بند کرنے کا فیصلہ کرلیا، تمام امتحانات بھی ملتوی کردیئے گئے۔

پنجاب حکومت نے کرونا وائرس کے بڑھتے ہوئے کیسز پر قابو پانے کیلئے صوبہ بھر کے سرکاری اور نجی دفاتر میں فوری طور پر سخت اقدامات اٹھانے کا فیصلہ کیا ہے۔

سیکریٹری ہیلتھ کیئر کے مطابق پنجاب حکومت نے سرکاری اور نجی دفاتر میں 50 فیصد عملے کو دفاتر بلانے اور باقی کو گھروں سے کام کرنے کا حکم دیدیا۔

سیکریٹری ہیلتھ کیئر محمد عثمان کا کہنا ہے کہ کرونا وائرس کے ممکنہ پھیلاؤ کے باعث دفاتر میں محض 50 فیصد عملہ ہی بلائیں، دفاتر میں آنیوالے ایس اوپیز پر سختی سے عملدرآمد کو یقینی بنائيں، احتیاط نہ کرنے سے وائرس کے پھیلاؤ میں تیزی آسکتی ہے۔

سیکریٹری پرائمری اینڈ سیکنڈری ہیلتھ کیئر پنجاب نے عملے کو 50 فیصد تک محدود کرنے کا نوٹیفکیشن بھی جاری کردیا، جس کے مطابق 31 جنوری تک 50 فیصد عملہ گھر سے کام کرنے کی پالیسی پر عمل کرے گا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں